Complaint registered against Waseem Rizvi

نئی دہلی: اتر پردیش شیعہ وقف بورڈ کے سابق صدر وسیم رضوی کے قر آن مجید سے متعلق بیان پربریلی کے کوتوالی علاقہ کے تھانے میں ایف آئی آر درج کرائی گئی ہے۔آل انڈیا تنظیم علمائے اسلام کی جانب سے درج شکایت میں وسیم پر26آیات کو حذف کر کے نیا قرآن ترتیب دینے کا الزام لگایا گیا ہے۔

تنظیم کے قومی جنرل سکریٹری مولانا شہاب الدین رضوی نے کہا کہ وسیم کے خلاف دیگر شہروں میں بھی ایف آئی آر درج کرائی جائے گی۔

اظہار خیال کرتے ہوئے مولانا خالد سیف اللہ رحمانی نے اخبارات کے لیے جاری کیے گئے ایک بیان میں کہا ہے کہ قر آن مجید اللہ تعالیٰ کی طرف سے بھیجی جانے والی آخری کتاب ہے، جو ایک ایک حرف کے ساتھ محفوظ ہے اور قیامت تک محفوظ رہے گا، خود اللہ تعالیٰ نے اس کی حفاظت کا ذمہ لیا ہے، اس لئے وسیم رضوی کا قر آن مجید میں تحریف کا منصوبہ محض ایک بیہودہ کوشش ہے، جو کبھی کامیاب نہیں ہوسکتی، اِس قسم کی کوشش پہلے بھی حکومتِ اسرائیل کی طرف سے ہوئی ہے اور مختلف دشمنانِ اسلام نے اس کی ناکام سعی کی ہے، اور اب بھی یہ کوشش ناکام ونامراد ہی رہے گی، یہ ایک شیطانی فکر ہے جو خالقِ کائنات سے لڑنے کے مترادف ہے، وسیم رضوی نے وزیر اعظم کو جو خط لکھا ہے اور قرآن طبع کرانے کا جو دعویٰ کیا ہے،آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ اس کی سخت مذمت کرتا ہے اور اس نے اس کو نظر میں رکھا ہے، ضرورت کے مطابق اس سلسلہ میں قدم اٹھائے گا۔