Dozens mosques in the Kingdom closed down after coronavirus infections were suspected among Namazis

ریاض:(اے یو ایس)سعودی عرب کی مساجد میں نمازیوں کی بے احتیاطی کی وجہ سے کورونا وائرس پھیلنے کے واقعات میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔گزشتہ دو روزکے دوران بھی درجنوں نمازیوں میں کورونا کی تصدیق ہوئی ہے جس کے بعدمختلف علاقوں میں واقع متعدد مساجد بند کر دی گئی ہیں۔ وزارت اسلامی امور، دعوت و رہنمائی کے مطابق گزشتہ 148 روز کے دوران کورونا کیسز سامنے آنے کے بعد اب تک1,790 سے زائد مساجد بند کرا دی گئی ہیں جن میں سے1,757 سے زائد کو سینیٹائزیشن کے بعد دوبارہ کھول دیا گیا ہے۔تازہ ترین کیسز کے بعد بند کرائی گئی مساجد کا تعلق مملکت کے مختلف ریجنز سے ہے۔ جبکہ عارضی طور پر بند کی گئی27مساجد کو گزشتہ روز سینیٹائزیشن کے بعد کھول دیا گیا ہے۔

گزشتہ دو روز کے دوران جن مساجد کو سینیٹائزیشن کے بعد نمازیوں کے لیے دوبارہ کھولا گیا ہے ، ان میں سے 13 مساجد عسیر ریجن، 4 الباحہ ریجن اور 2 مشرقی ریجن میں واقع ہیں۔اس کے علاوہ بحال کی جانے والی دیگر 6 مساجد کا تعلق مکہ مکرمہ ریجن، 2 کا حدود شمالیہ اور ایک کا باحہ ریجن سے ہے۔وزارت اسلامی کی جانب سے ٹویٹر اکاؤنٹ پر تمام نمازیوں سے اپیل کی گئی ہے کہ اگر کوئی بھی نمازی اپنے اندر کورونا وائرس کی کوئی علامت محسوس کرے تو کرونا ٹیسٹ کے بغیر مسجد جانے سے گریز کرے۔نمازیوں کے کورونا میں مبتلا پائے جانے پر لوگوں کی سلامتی کی خاطر مساجد بند کرکے انہیں وائرس سے محفوظ کرنے کے بعد دوبارہ کھولا جاتا رہا ہے۔جب تک یہ یقین نہیں ہوجائے کہ وہ کورونا میں مبتلا نہیں ہے وہ گھر پر ہی نماز ادا کرتا رہے۔چہرہ ماسک سے ڈھانپے رکھیں، جائے نماز گھر سے ہی لائیں، مساجد میں ڈسپوزیبل جائے نماز کی سہولت بھی فراہم کر دی گئی ہے۔

دیگر نمازیوں سے محفوظ فاصلہ رکھیں۔ وزارت اسلامی امور نے مزید کہا کہ ’اس حوالے سے لاپروائی برتنے کا نتیجہ دیگر نمازیوں کو خطرات سے دوچار کرنے کی صورت میں برآمد ہوگا۔ سب لوگ یہ بات مدنظر رکھیں کہ حفاظتی تدابیر کی پابندی دینی فریضہ اور شہری عمل ہے‘۔ نمازیوں سے اپیل کی گئی ہے کہ اگر کسی مسجد میں کورونا ایس او پیز پر عمل درآمد میں کوتاہی نظر آئے تو پہلی فرصت میں 1933 پر رابطہ کرکے مطلع کردیں۔