Pakistan cannot dictate us, impose its views: Taliban spokesman

کابل: امریکی اور ناٹو فوج کی واپسی کے درمیان طالبان افغانستان پر اپنا قبضہ کرنا چاہتا ہے۔ لیکن اس دوران پاکستان جو دہشت گردوں کی پناہ گاہ بن چکا ہے ، وہ طالبان پر اپنا تسلط قائم کرنا چاہتا تھا ، جس کی وجہ سے طالبان قیادت نے سخت برہمی کا اظہار کیا ہے۔ پاکستان کو ایک سخت انتباہ دیتے ہوئے ، طالبان کے ترجمان سہیل شاہین نے کہا ہے کہ افغانستان میں مذاکرات کے حوالے سے طالبان کی مدد کرنے کا پاکستان کاخیرمقدم کیا جائے گا ، لیکن اگر اس نے ہمیں ہدایت دینے یا اس پر اپنے نظریات مسلط کرنے کی کوشش کی تو اسے ہر گز برداشت نہیں کیا جائے گا۔

طالبان ترجمان نے یہ بات جیو نیوز آف پاکستان کے پروگرام جگرا میں دیئے گئے ایک انٹرویو کے دوران کہی۔ طالبان نے دعویٰ کیا ہے کہ اس نے افغانستان کے 85 فیصد حصے پر قبضہ کرلیا ہے یہی وجہ ہے کہ پاکستان نے افغانستان سے ملحقہ سرحد کا گھیرا و¿کرنا شروع کیا ہے اور نگرانی میں اضافہ کیا ہے۔اس دوران سہیل شاہین نے پاکستان کے ساتھ افغان طالبان سے خصوصاً ان اطلاعات کے تناظر میں کہ طالبان پاکستان کو سننے کے لئے تیار نہیں ہے تعلقات کے بارے میں پوچھا گیا تو انہوں نے کہا ، ہم برادرانہ تعلقات چاہتے ہیں۔پاکستان ہمارا ہمسایہ ملک ہونے کے ساتھ ساتھ ایک مسلم ملک ہے اور ہم مشترکہ اقدار کے ہیں ، جن میں تاریخی ، مذہبی اور ثقافتی امور شامل ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان امن عمل میں ہماری مدد کرسکتا ہے لیکن ہم پر حکم نہیںچلا سکتا اور یہ بین الاقوامی اصولوں کے خلاف ہے۔شاہین نے ایک اسلامی ملک کی حیثیت سے طالبان کے افغانستان کے مطالبے کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ اسلامی ملک ہونا افغانستان کے عوام کا ایک جائز حق ہے۔ ہم دوسری حکومتوں کے بارے میں کچھ نہیں کہتے اسی لیے وہ اپنے خیالات کو ہم پر مسلط نہ کریں۔اس بارے میں کہ آیا طالبان نے کالعدم تحریک طالبان پاکستان(ٹی ٹی پی)کو قبول کرنے کے سوال پر شاہین نے کہا ،مجھے ٹی ٹی پی کے بارے میں نہیں معلوم لیکن ہم اسلامی ملک کی پالیسی کے بارے میں ضرور بتائیں گے۔

ایک طالبان ترجمان نے کہا ،ہم کسی فرد یا کسی بھی گروہ کو افغان سرزمین استعمال کرنے کی اجازت نہیں دیں گے اور ہماری حیثیت سب کے لئے واضح اور اچھی طرح سے معلوم ہے۔اہم بات یہ ہے کہ امریکی فوجیوں کے انخلا کے بعد سے ، طالبان تیزی سے متحرک ہوچکا ہے اور انہوں نے ملک کے بڑے حصوں پر قبضہ کرنا شروع کردیا ہے۔