Taliban's existence not possible without support of countries in the region : Afghan envoy to India Farid

نئی دہلی: افغانستان میں جنگجوؤں کے شدید تشدد کے درمیان ، افغانستان کے ایلچی فرید مموندجے نے پاکستان کو نشانہ بنایا ہے۔ میڈیا سے گفتگو کے دوران فرید مموندجے نے پاکستان کو متنبہ کیا کہ پاکستان کو سمجھنا چاہئے کہ بارشوںسے دوستی اچھی نہیں ہوتی۔ انہوں نے کہا کہ وہ طالبان کی حمایت کرنا چھوڑ د ے۔

افغان سفیر متعین ہندوستان فرید مموندجے نے کہا کہ طالبان جنگجوؤں نے گذشتہ ایک دہائی کے دوران افغانستان کی کامیابیوں پر پانی پھیردیا ہے۔انہوں نے کہا پاکستان کے کوئٹہ ، پشاور اور دوسرے مقامات پرشورا کی موجودگی ہمارے لئے لمحہ فکریہ ہے۔ طالبان نے افغانستان کے متعدد اضلاع پر قبضہ کر لیا ہے اور افغان فورسز پر حملے تیز کردیئے ہیں۔

اپریل میں غیر ملکی افواج کے افغانستان چھوڑنے کے اعلان کے بعد سے اب تک جنگجوو¿ں کے حملوں میں 1000 سے زیادہ فوجی اور 3000 سے زیادہ عام شہری ہلاک ہوچکے ہیں۔در حقیقت ، افغان سفیر فرید مموندجے سے یہ سوال پوچھا گیا کہ پاکستان کی حمایت کے بغیر ، طالبان اتنا آگے نہیں بڑھ پاتے ، اس پر آپ کیا کہیں گے؟ اس پر فرید مموندجے نے کہا کہ طالبان کے اعلیٰ رہنماؤں کی جڑیں پشاور سے جڑی ہوئی ہیں۔ان کے کنبے، ان کی سرمایہ کاری ، کاروبار سب پشاور میں ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر آج ہم مشکل میں ہیں تو کل ان کے لئے بھی پریشانی بڑھ سکتی ہے۔

مموندجے نے کہا ، افغانستان میں سکیورٹی کی صورتحال اچھی نہیں ہے ، لیکن ہندوستانی سفارتخانے کو فوری طور پر کوئی خطرہ نہیں ہے۔ تمام 34 صوبوں کے عارضی دارالحکومتوں پر ہماری فوج کا کنٹرول ہے۔وہیں فرید نے ہندوستان کی تعریف کرتے ہوئے مدد کرنے کی امید کا بھی اظہار کیا ہے۔انہوں نے کہا کہ اس وقت یہاں کھانے کی قلت ہے۔

ہندوستان ہمیشہ ہمارے لئے ایک بہت بڑا مددگار رہا ہے۔ ہم ہندوستان کے ساتھ مدد کے لئے تبادلہ خیال کر رہے ہیں اور ہمیں پوری امید ہے کہ آنے والے وقت میں ہندوستان ہمارے ساتھ کندھے سے کندھا ملا کر کھڑا ہوگا۔حالانکہ ہندوستان کی طرف سے افغانستان سے مدد کی اپیل کے بعد کوئی بیان جاری نہیں کیا گیا۔