Afghan police officer fights Taliban terrorists alone for 18 hours

کابل:: ان دنوں افغانستان میں طالبان کی کارروائیوں میں شدت آگئی ہے اور افغان فورسز کو پوری طاقت کے ساتھ طالبان جنگجوؤں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ جنوبی صوبہ قندھار میں ، ایک افغان فوجی 18 گھنٹوں تک دہشت گردوں کے ساتھ تنہا مقابلہ کرتا رہا۔قندھار کے جنوبی علاقے میں ہونے والے انکاو¿نٹر میں ، افغان پولیس افسر احمد شاہ نے طالبان دہشت گردوں کے ساتھ اکیلے مقابلہ کیا۔احمد شاہ 14 فوجیوں سمیت قندھار کے علاقوں میں موجود چوکیوں پر تعینات تھا ، تبھی طالبان دہشت گردوں نے ان پر حملہ کیا۔ زخمی احمد شاہ نے دہشت گردوں کے سامنے گھٹنے ٹیکنے کے بجائے بہادری سے مقابلہ کیا۔

احمد شاہ نے بتایا کہ انہوں نے ہتھیار نہیں ڈالے اور طالبان دہشت گردوں کا مقابلہ کیا ، دشمن کمزور ہیںوہ اپنے پروپیگنڈوں سے ہمیں ڈرانا چاہتے ہیں لیکن ہمیں حقیقی زندگی میں دشمن سے ڈرنا نہیںچاہئے ہے۔احمد نے 18 گھنٹے تک اکیلے ہی دہشت گردوں کو الجھائے رکھا۔افغانستان کی طرف سے اس کی مدد کے لئے پولیس کو ایک اضافی پولیس دستے کو بھیجا گیا جس نے احمد شاہ کو بچایا۔ شاہ کی حالت اب مستحکم ہے۔ بہادر پولیس افسر نے کہا کہ دشمن کمزور ہیں اور صرف ہماری فوج کا حوصلہ توڑنا چاہتے ہیں۔ یا رہے کہ 31 اگست تک ، امریکی فوج افغانستان میں اپنے فوجی آپریشن بند کر دے گی۔ امریکی افواج کے انخلا کے ساتھ ہی ، طالبان دہشت گرد سر اٹھا رہے ہیں اور افغانستان پر قبضہ کرنا چاہتے ہیں اور ان کا دعویٰ ہے کہ وہ 80فیصد ملک پر قابض ہو چکے ہیں۔