Three killed in Iran’s Khuzestan water crisis protests

تہران🙁 اے یو ایس )ایران میں پانی کی دستیابی کی قلت کے خلاف مسلسل چوتھے روز بھی احتجاج جاری رہا۔ اس دوران مقامی میڈیا نے اتوار کی شام بتایا کہ ملک کے جنوب مغربی حصے میں واقع شہر الخفاجیہ میں مظاہرین پر براہ راست فائرنگ کر دی گئی۔ اس کے نتیجے میں 3 افراد ہلاک ہو گئے۔ایرانی ذرائع کے مطابق الخفاجیہ اور اس کے نواحی علاقوں میں انٹرنیٹ منقطع ہو گیا ہے۔اسی طرح ایرانی حکام نے الاہواز کے جنوب مشرق میں المحمرہ شہر میں گرفتاریاں انجام دیں۔ سوشل میڈیا پر زیر گردش وڈیو کلپوں میں الخفاجیہ میں مظاہرین پر فائرنگ کی آوازیں سنائی دیں۔ واضح ہو کہ ایران گذشتہ 50سال کے دوران اب تک کی بدترین خشک سالی کے دور سے گذر رہا ہے۔

ملک کے عرب اکثریتی آبادی والے شہروں میں پانیہ کی شدید قلت کے خلاف گذشتہ تین روز سے احتجاجی مظاہرے ہو رہے ہیں۔ ان شہروں میں الاہواز، الخفاجیہ، الفلاحیہ، السوس، شوور، الحمیدیہ ، الحویزہ اور المحمرہ شامل ہے۔واضح رہے کہ گذشتہ ایام کے دوران میں ملک کے جنوب مغرب میں خوزستان صوبے کے مختلف شہروں میں احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ شروع ہوا۔ یہ احتجاج پانی کی عدم دستیابی ، خوزستان صوبے میں پانی کی منتقلی کے منصوبوں اور صوبے کی آبادی کو جبری ہجرت پر مجبور کیے جانے کے خلاف سامنے آیا۔یادرہے کہ ایرانی حکام عموما مظاہرین کی ہلاکت کو “مشتبہ عناصر” اور “انقلاب کے دشمنوں” سے منسوب کرتے ہیں۔