Relatives kill 17-year-old UP girl over wearing jeans

لکھنؤ: اتر پردیش کے دیوریا ضلع میں ایک 17 سالہ لڑکی کو جینس پہننے پر اس کے قریبی رشتہ داروں نے بری طرح زدو کوب کر کے جان سے مار ڈالا ۔ اس معاملہ میں دو افراد بشمولبچی کا دادا اور لاش کو ٹھکانے لگانے میں مدد کرنے والا آٹو ڈرائیور گرفتار کیا جا چکا ہے جبکہ دو ابھی فرار ہیں۔بتایا جاتا ہے کہ متوفیہ پنجاب کے شہر لدھیانہ میں اپنے والدین کے ساتھ رہائش پذیر تھی۔گاؤں واپس آنے پر شام کے تقریبا 7.30 بجے جب لڑکی نے نہا دھو کر جینز پہنی تو اس کی دادی اور چاچا کو اعتراض ہوا۔

یہ الزام لگایا جاتا ہے کہ لڑکی کے دادی نے اس سے جینز بدل کر روایتی لباس پہننے کہا لیکن لڑکی راضی نہیں ہوئی اور اس نے سنی ان سنی کر دی اور جب ا س سے سختی سے کہا گیا تو اس نے کہا کہ وہ جینز پہننا پسند کرتی ہے۔ جس پردادی کو غصہ آگیا اور اس نے اس کی پٹائی کرنے کا حکم دیا اور اس کے شوہر اور بیٹوں نے اسے نہایت سنگدلی سے زدو کوب کیا۔اور اس کی حالت غیر ہوتے دیکھ کر اسے یہ لوگ اسپتال،لے گئے لیکن اس نے راستے میں دم توڑ دیا۔ اس کے مر جانے سے یہ لوگ گھبرا گئے اور انہوں نے اسے پل سے ہی ندی میں پھینک دیا۔ لیکن اس کا جسم دریا میں نہیں گرا اور ریلنگ میں پھنس گیا اور لاش لٹکتی رہی۔ صبح راہگیروں نے لاش دیکھی اور پولیس کو اطلاع دی جو لاش اتار کر پوسٹ مارٹم کے لیے لے گئی۔اس کی ماں کی حالت خراب ہے جس کی بیٹی کو اس کی آنکھوں کے سامنے پیٹا گیا تھا۔ لڑکی کے ماموں نے چار افراد کے خلاف ایف آئی آر درج کرائی۔