King Abdullah confirms Jordan previously attacked by Iran

عمان: ( اے یوایس ) اردن کے فرمانروا شاہ عبداللہ دوم نے اعلان کیا کہ ان کے ملک پر اس سے قبل ایرانی ساختہ ڈرونوں طیاروں سے حملہ کیا گیا تھا۔ ان کا کہنا ہے کہ انہیں خطے میں ایران کی سرگرمیوں سے متعلق بہت سے خدشات ہیں۔شاہ عبداللہ دوم نے اتوار کے روز “سی این این” کو دیے انٹرویو کے دوران کہا کہ جس طرح شام اور لبنان سے بعض اوقات اسرائیل پر حملہ کیا جاتا ہے مگر اس سے اردن متاثر ہوتا ہے۔ اسی طرح ہمیں بھی یہ خدشات لاحق ہیں۔ ہمارے بہت سے ممالک کو سائبر حملوں کا سامنا ہے۔ داعش کے ساتھ لڑائی کے عروج کے دوران جس طرح کے حالات تھے سرحدوں پر اسی طرح کی کشیدگی ہے۔ بدقسمتی سےہمیں ڈرون طیاروں سے نشانہ بنایا گیا۔ یہ ڈرون ایرانی ساختہ تھے مگر ہم نے انہیں مار گرایا۔

اس سوال کے بارے میں ان کا کہنا تھا کہ یہ حملے حالیہ مہینوں میں ہوئے ہیں۔ کچھ حملے پچھلے سال ہوئے مگر اب ان میں اضافہ ہوا ہے۔ اردنی بادشاہ نے مزید کہا کہ اردن نے ہمیشہ بات چیت کی حمایت کی ہے لیکن ہمارے پاس متعدد جائز خدشات موجود ہیں۔ اسرائیل اور خلیجی ممالک کی سلامتی کو نقصان پہنچانے والے ایرانی جوہری اور بیلسٹک سسٹم پر امریکیوں سے توقع ہے کہ وہ ایران سے بات کریں گے۔