Return of terror camps in Afghanistan will have direct impact on India: Envoy to UN

اقوام متحدہ: اقوام متحدہ میں ہندوستان کے مستقل نمائندے اور اگست کے مہینے کے لیے سلامتی کونسل کے صدر ٹی ایس تیرومورتی نے پیر کو کہا کہ افغانستان کی صورتحال سلامتی کونسل کے تمام ارکان کے لیے گہری تشویش کا باعث ہے۔ انہوں نے ایک بار پھر کہا کہ ہم اس جنگ زدہ ملک میں دہشت گرد کیمپوں کی واپسی برداشت نہیں کر سکتے اور اس کا براہ راست اثر بھارت پر پڑے گا۔ سال 2021-22 کی مدت کے لیے قوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے غیر مستقل رکن ہندوستانے اگست کے مہینے کے لیے اقوام متحدہ کے اس طاقتورانگ کی صدارت سنبھالی ہے۔

تیرومورتی نے یہاں میڈیا کے نمائندوں کو بتایاافغانستان کی صورتحال سلامتی کونسل کے تمام ارکان کے لیے گہری تشویش کا معاملہ ہے اور ہم نے حالیہ دنوں میں دیکھا ہے کہ تشدد(وہاں) بڑھ رہا ہے۔ انہوں نے اقوام متحدہ کی ایک رپورٹ کا حوالہ دیا جس میں کہا گیا ہے کہ افغانستان میں جنوری اپریل کے مقابلے مئی جون میں تشدد سے زیادہ لوگ مارے گئے۔ یہ پوچھے جانے پر کہ سلامتی کونسل افغانستان کے حالات کو بگڑنے سے روکنے کے لیے کیا کر سکتی ہے ، انہوں نے کہا کہ انہیں توقع ہے کہ شاید سلامتی کونسل اس پہلو پر جلد از جلد غور کرے گی۔

تیرومورتی نے کہا کہ جہاں تک ہندوستان کا سوال ہے تو ہندوستان پہلے ہی واضح کر چکا ہے کہ ہم ایک آزاد ، پرامن ، جمہوری اور مستحکم افغانستان دیکھنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم اس جنگ زدہ ملک میں دہشت گرد کیمپوں میں واپس جانے کے متحمل نہیں ہو سکتے۔ اور اس کا براہ راست اثر ہندوستان پر پڑے گا۔