BJP celebrates 2nd anniversary of abrogation of article 370 across the J&K

سرینگر: (اے یوایس ) بی جے پی نے دفعہ370 اور35 اے کے خاتمہ کے دو سال مکمل ہونے پر پورے مرکزی علاقہ میں زبردست جشن منایا۔ اس کے کارکنوں نے وادی کشمیر کے مختلف علاقوں میں ترنگا ریلیوں کا اہتمام کیا۔ سرینگر ، کپواڑہ اور اننت ناگ میں کارکنوں نے ریلیوں میں شرکت کی۔ ہاتھوں میں ترنگا لئے ان ریلیوں میں شامل لوگوں کا کہنا ہے کہ دو برس قبل مرکز کی طرف سے لئے گئے اس تاریخی فیصلے سے جموں و کشمیر میں ترقی کا ایک نیا باب شروع ہو چکا ہے۔ کپواڑہ میں نکالی گئی ترنگا ریلی میں شامل بی جے پی لیڈر انور خان نے کہا کہ دفعہ370 ہٹائے جانے کے بعد اب جموں و کشمیر میں ترقی کا نیا دور شروع ہوگیا ہے اور یہی وجہ ہے کہ وہ اس دن کو جشن کے طور پر منا رہے ہیں۔کپواڑہ سے ہی تعلق رکھنے والے ایک اور بی جے پی لیڈر جاوید قریشی کا کہنا ہے کہ کشمیر کے لوگ ایک ودھان، ایک سمادھان، اور ایک نشان پر یقین رکھتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ آج کشمیر میں چاروں جانب ترنگا لہرا رہا ہے۔

انہوں نےدفعہ370ہٹائے جانے کے لئے وزیر اعظم نریندر مودی کا شکریہ ادا کیا۔ قریشی نے کہا کہ دفعہ370ے خاتمے کے بعد کشمیر میں امن و قانون کی صورتحال بہتر ہو رہی ہے اور پتھراو¿ کے واقعات پر بھی روک لگ چکی ہے۔ سرینگر میں بی جے پی کے کارکنوں نے پارٹی دفتر پر ایک پروگرام منعقد کیا۔ اس موقع پر بی جے پی کے ترجمان الطاف ٹھاکر نے کہا کہ5 اگست2019کے بعد جموں وکشمیر کے عوام کو خاندانی راج اور پتھراؤ سے آزادی ملی ہے۔ نیوز 18 اردو سے بات کرتے ہوئے ٹھاک±ر نے کہا کہ اس فیصلے سے کشمیر کے عام لوگ خوش ہیں۔ ان کے مطابق دو سال قبل لئے گئے اس تاریخی فیصلے سے صرف وہ دو خاندان مایوس ہیں ، جو ان دفعات کی آڑ میں گزشتہ کئی دہائیوں سے لوگوں کا استحصال کرتے رہے ہیں۔اننت ناگ میں بی جے پی مہلا مورچے کی طرف سے ترنگا ریلی نکالی گئی ، جس کی قیادت مہلا مورچہ جموں و کشمیر کی نائب صدر رومیسہ رفیق نے کی۔ نیوز 18 اردو سے بات کرتے ہوئے رومیسہ رفیق نے کہا کہ بی جے پی نے لوگوں کے ساتھ کئے ہوئے اپنے وعدے پورے کئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پی ڈی پی ، این سی اور کانگریس نے ہمیشہ جموں و کشمیر کے لوگوں کا استحصال کیا ہے۔

رومیسہ نے کہا کہ لوگ اب بیدار ہوچکے ہیں اور وہ ان موقع پرست سیاستدانوں کی چالوں کو سمجھ چکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دفعہ370اور35اے کے خاتمے کے بعد جموں و کشمیر کی خواتین کو ان کے وہ حقوق بحال ہو گئے ہیںجن سے انہیں محروم رکھا گیا تھا ۔ کشمیر وادی کے ساتھ ساتھ جموں میں بھی بی جے پی نے کئی پروگرام منعقد کئے۔ پارٹی کے صدر دفتر پر ایک پروگرام منعقد کیا گیا جس دوران شیاما پرساد م±کھرجی کو خراج و عقیدت پیش کیا گیا۔ اس موقع پر پارٹی لیڈران نے مرکز کی طرف سے دو سال پہلے لئے گئے فیصلے کی ستائش کی ۔ پارٹی کے جموں و کشمیر کے صدر رویندر رینا نے کہا کہ دفعہ370 اور35 اے جموں و کشمیر کی ترقی میں حائل ایک بڑی رکاوٹ تھی ، جسے مرکزی سرکار نے دور کیا۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے دو برس قبل یہ دفعات ہٹا کر مرکزی علاقہ کے عوام کو ایک بڑا تحفہ دیا۔

انہوں نے کہا کہ گزشتہ ستر برس کے دوران جموں و کشمیر کی مختلف سرکاروں نے مغربی پاکستان کے رفیوجیوں ، بالمیکی سماج اور گجر بکروال طبقے کے ساتھ امتیازی سلوک روا رکھا تھا جو اب ختم ہوچکا ہے۔ دوسری جانب نیشنل کانفرنس، کانگریس ، پی ڈی پی اور سی پی آئی ایم نے دو سال قبل لئے گئے اس فیصلے کی مخالفت کی۔ پی ڈی پی نے اس دن کو یوم سیاہ کے طور پر منایا۔ پی ڈی پی صدر محبوبہ مفتی نے کہا کہ ان کی پارٹی اس فیصلے کے خلاف ہے اور وہ ان دفعات کی بحالی کے لئے ہرسطح پر جدوجہد جاری رکھے گی۔ اس موقع پر محبوبہ مفتی نے ایک بار پھر پاکستان کے ساتھ بات چیت شروع کرنے کا اپنا پرانا راگ الاپا۔ انہوں نے کہا کہ خطے میں کشیدگی کم کرنے کے لئے پاکستان کے ساتھ بات چیت کرنا لازمی ہے۔

نیشنل کانفرنس کی طرف سے پارٹی کے صدر دفتر پر ایک میٹنگ منعقد کی گئی۔ میٹنگ کی صدارت پارٹی کے صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کی۔ اس موقع پر پارٹی نے جموں و کشمیر کی خصوصی پوزیشن کو بحال کرنے کے اپنے مطالبہ کا اعادہ کیا ۔ میٹنگ میں عہد کیا گیا کہ پارٹی دفعہ370 اور پ35 اے کی بحالی کے لئے اپنی کوششیں مسلسل جاری رکھے گی۔ کانگریس نے دفعہ تین سو ستر ہٹائے جانے کے دو برس مکمل ہونے کے موقع پر مرکزی سرکار کو تنقید کا نشانہ بنایا۔ پارٹی ترجمان رویندر شرما نے سرکار سے سوال کیا کہ کیا دفعہ370 ہٹائے جانے کے بعد جموں و کشمیر میں ملیٹینسی کا خاتمہ ہوچکا ہے ، جیسا کہ مرکز نے دعوی کیا تھا۔