Saudi, Indian navies hold exercise in Arabian Gulf

ریاض: سعودی عرب کی وزارت دفاع سے جاری ایک بیان کے مطابق سعودی عرب اور ہندوستان کی بحریہ نے ”ال موحد الہندی 2021“ کے عنوان سے خلیج عرب میں مشترکہ فوجی بحری مشقیں شروع کر دیں۔ جبیل میں شاہ عبد العزیز بحری اڈے میں ہونے والی ان مشقوں میں مشرقی بیڑہ رائل سعودی بحریہ کی نمائندگی کر رہا ہے۔ان مشقوں میں حصہ لینے کے لیے ہندوستانی بحریہ کا میزائل شکن آئی این ایس کوچی پیر کے روز ہی سعودی عرب پہنچ گیا تھا۔ یہ جنگی جہاز سنیچر کو ابو ظبی کے ساحل پر متحدہ عرب امارات کے ساتھ بحری مشقیں کرنے کے بعد سعودی عرب پہنچا ہے۔ال موحد الہندی2021کی مشقوں کا پہلا مرحلہ جو بندرگاہی تھاپیر کے روز مکمل ہو گیا اور اب سمندر کے اندر مشقیں آج بدھ سے شروع ہو گئیں۔

سعودی پریس ایجنسی کے مطابق ان مشقوں کا مقصد مہارت کا تبادلہ اور خلیج عرب میں جہاز رانی اور سمندری تجارت کی آزادی یقینی بنانے کے لیے مشترکہ کارروائی کے دور ان کمان، کنٹرول اور رابطہ کو بہتر بنانا ہے۔ مشرقی بیڑے کے کمانڈر وائس ایڈمیرل ماجد القہتانی نے کہا کہ یہ مشقیں سعودی عرب اور ہندوستان کے درمیان اپنی نوعیت کی پہلی فوجی مشق ہے اور اس سے دونوں ممالک میں بحریہ کارروائیوں میں فوجی تعاون کو فروغ حاصل ہوگا۔

ہندوستانی سفارت خانہ واقع ریاض سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ان مشقوں نے دو طرفہ دفاعی تعلقات میں ایک نئے باب کا اضافہ کیا ہے۔قبل ازیں آئی این ایس کوچی کا جبیل بندرگاہ پر رائل سعودی بحری دستوں کے افسران بالا نے خیر مقدم کیا۔واضح ہو کہ یہ مشقیں ایک ہفتہ پہلے ہی ساحل عمان پر ایک تجارتی ٹینکر پر ڈرون حملہ کے بعد جس میں ایک برطانوی اور رومانیائی شہری ہلاک ہو گیا،خلیج میں پھیلی کشیدگی کے درمیان کی جارہی ہیں۔