Stomach worm treatment drugs effective to control coronavirus: a research

کیلیفورنیا:(اے یو ایس )تحقیق کیلیفورنیا میں واقع اسکرپس ریسرچ میں وارم انسٹی ٹیوٹ فار ریسرچ اینڈ میڈیسن کے پروفیسر کم جانڈا اور ایلی آر۔ کیلاوے نے یہ دعویٰ کرتے ہوئے کہ پیٹ کے کیڑے مارنے والی دوا سے کورونا وائرس کا علاج ممکن ہے کہا کہ اس دوا میں سیلیسیلانیلائڈز کلاس کا کیمیکل ہوتا ہے جو کورونا جیسے ہلاکت خیز وائرس کو ختم کرنے میں موثر ہے۔

ا نہوں نے مزید کہا کہ ایک نئی تحقیق میں ایسی ہی بات سامنے آئی ہے کہ یہ دوا ہر لحاظ سے مہلک وائرس کاموثر ترین توڑ ثابت ہو سکتی ہے؟ ۔ انسٹی ٹیوٹ کے لیب میں تحقیق کے دوران یہ بات بھی سامنے آئی کہ یہ دوا 48 گھنٹوں کے اندر وائرس کو مارنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔کم جانڈا نے کہا کہ گزشتہ 10-15 سالوں سے اس بات کی تصدیق کی گئی ہے کہ سیلیسیلینیلائڈز مختلف قسم کے وائرس کے خلاف بڑی سرعت سے فعال ہو جاتا ہے ۔ تاہم چونکہ یہ آنتوں سے متعلق ہے اور اس کا زہریلا اثر بھی ہوسکتا ہے۔

اس لئے ہم نے چوہوں اور خلیوں پر مختلف قسم کے لیبارٹری ٹیسٹ کیے تاکہ اپنی بات کو پختہ طور پر ثابت کرسکیں۔کورونا کی تیسری لہر کا خطرہ اس لیب اسٹڈی میں یہ بات بھی سامنے آئی کہ یہ دوا یعنی سیلیسیلانیلائڈز سے کورونا وائرس کا RNA 93 فیصد کمزور کرتی ہے۔ حالانکہ اس کی باضابطہ طور پر تصدیق نہیں ہو پائی ہے کیونکہ اس اسٹڈی میں انسانوں پر آزما کر دوا کے اس اثر کی تصدیق کے لیے نہیں دیکھا گیا ہے لیکن بنگلہ دیش کے ایک نجی اسپتال سے جو معلومات سامنے آئی ہے وہ کسی بڑی خوشخبری سے کم نہیں ہے۔