Taliban claim to have captured capital of Ghazni province

کابل: طالبان کے ایک سینیئر کارکن قاری یوسف احمدی نے جمعرات کے روز کہا کہ طالبان نے اپنی پیشقدمی جاری رکھتے ہوئے افغانستان کے جنوب مشرقی صوبہ غزنی کے دارالخلافہ غزنی شہر پر قبضہ کر لیا ۔انہوں نے ٹوئیٹر کے توسط سے کہا کہ طالبان نے گورنر کی رہائش گاہ، پولس ہیڈ کوارٹرز، ایک جیل اور شہر کی کئی دیگر تنصیبات و اہم عمارتوں پر قبضہ کر لیا ہے۔ احمدی نے مزید بتایا کہ غزنی پر قبضہ کے دوران شدید جھڑپوں میں افغان سرکاری فوجوں کو زبردست جانی نقصان اٹھانا پڑا اور 10فوجیوں نے خود سپردگی کی۔واضح ہو کہ افغانستان میں طالبان دہشت گردوں کا قہر تھمنے کا نام نہیں لے رہا ہے۔ اس کا زیادہ سے زیادہ صوبوں پر قبضہ کرنے کا منصوبہ خطرناک ہوتا جا رہا ہے۔ ان کے خوف سے بچنے کے لیے ، ہزاروں افغان خاندان دارالحکومت کابل بھاگ گئے ہیں ، جہاں وہ کھلے آسمان تلے سڑکوں پر رہنے کومجبور ہیں۔

طالبان نے گزشتہ چار دنوں میں کئی صوبائی دارالحکومتوں پر قبضہ کر لیا ہے۔پیر کو طالبان نے شمالی صوبے سمنگن کے دارالحکومت ایبک پر قبضہ کر لیا۔ اس سے قبل طالبان قندوز ، تخار ، جوزان ، سر پول اور نیمروج پر قبضہ کر رکھا ہے۔ اس کے علاوہ ، ہرات ، قندھار اور ہلمند صوبوں میں طالبان اور سرکاری افواج کے درمیان شدید لڑائی جاری ہے۔

طالبان نے یہ بھی اعلان کیا ہے کہ وہ اب ملک کے شمال میں سب سے بڑے شہر مزار شریف کی طرف منتقل ہو رہے ہیں۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق 15 صوبوں میں شدید لڑائی کے دوران ہزاروں خاندان قندوز ، قندھار ، نمروج ، تخار اور بغلان صوبوں سے کابل بھاگ گئے ہیں۔ دہشت
کی وجہ سے بھاگنے والے لوگ کابل کے علاقے سر شامالی اور خیرخانہ علاقوں میں ڈیرے ڈالے ہوئے ہیں۔ خامہ پریس نے بتایا کہ شمالی صوبے قندوز سے سینکڑوں بے گھر افراد کابل شہر میں پولیس ڈسٹرکٹ 15 کے ایک پارک میں رہائش پذیر ہیں۔ بچے ، بوڑھے اور زخمی ارکان سمیت خاندان کابل میں ڈیرے ڈالے ہوئے ہیں ، جن میں سے اکثر اپنے بالغ مرد ممبروں کی قسمت سے ناواقف ہیں ، جو کہ واحد کمانے والے ہیں۔ افغان حکومت نے ابھی تک انہیں کھانا اور رہائش فراہم نہیں کی ہے ، لیکن مقامی لوگ بے گھر افراد کو خوراک فراہم کر رہے ہیں۔ افغان مہاجرین کی وزارت نے کہا کہ اندرونی طور پر بے گھر افراد کی تعداد بے مثال رہی ہے اور جنگ کی وجہ سے انہیں بنیادی سہولات فراہم کرنا مشکل ہو گیا ہے۔ وزارت کے مطابق گزشتہ پانچ ماہ کی لڑائی میں 75 ہزار خاندان بے گھر ہوئے ہیں۔