PM Modi pays last respects to Kalyan Singh

نئی دہلی: (اے یو یس ) وزیر اعظم نریندر مودی نے اترپردیش کے سابق وزیر اعلیٰ کلیان سنگھ کو لکھنو¿ میں واقع ان کی رہائش گاہ جا کر انہیں خراج عقیدت پیش کیا۔ لکھنؤ ہوائی اڈے پہنچنے پر ریاست کی گورنر آنندی بین پٹیل اور وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے وزیر اعظم کا استقبال کیا۔وزیر اعظم ہوائی اڈے سے براہ راست مال ایونیو پر واقع کلیان سنگھ کی رہائش گاہ پر پہنچے اور انہیں خراج عقیدت پیش کیا۔ اس سے قبل ریاست کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ بھی ان کی رہائش گاہ پر پہنچے اور کلیان سنگھ کو خراج عقیدت پیش کیا۔اپنے تعزیتی پیغام میں ، وزیر اعظم نے کہا ، “ہم نے ایک قابل لیڈر کھو دیا ہے۔ ہمیں اس کی اقدار اور عزم کے ساتھ اس کی تلافی کرنے کی پوری کوشش کرنی چاہیے ، ہمیں اس کے خوابوں کو پورا کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑنی چاہیے۔ میں بھگوان رام سے پرتھنا کرتا ہوں۔ میری خواہش ہے کہ کلیان سنگھ کو ان کا مقام دیا جائے اور ان کے خاندان کو یہ درد برداشت کرنے کی طاقت دی جائے۔

بی جے پی کے سےنئر لیڈر ایل کے اڈوانی نے بھی کلیان سنگھ کے انتقال پر تعزیت کی ہے۔ رام جنم بھومی تحریک کے دوران ان کے ساتھ گزارے لمحات کو یاد کرتے ہوئے اڈوانی نے کہا کہ ایودھیا مسئلہ کو حل کرنے کے لیے ان کا عزم ، مہم اور اخلاص نہ صرف میری پارٹی ، بی جے پی بلکہ سیکڑوں ہندوستانیوں کے لیے طاقت کا ایک بڑا ذریعہ تھا۔ بھگوان رام کی رام جنم بھومی میں ایک عظیم الشان مندر کے ان کے خواب کی تکمیل کا شدت سے انتظار کررہے تھے ۔راشٹریہ سویم سیوک سنگھ کے سرسنگھلک موہن جی بھاگوت اور سرکاریاوا دتاتریہ ہوسبلے نے بھی کلیان سنگھ کی موت پر تعزیت کی ہے۔ اپنے پیغام میں ان لوگوں نے کہا ہے کہ کلیان سنگھ ایک بنیاد پرست سیاستدان اور ہنر مند منتظم ، ایک ہندوتوا ، بھگوان شری رام کے عقیدت مند اور ہندوستانی اقدار کے عقیدت مند محب وطن تھے۔ ان کی موت سے عوامی زندگی میں ناقابل تلافی نقصان ہوا ہے۔

کلیان سنگھ کا ہفتہ کو لکھنو¿ میں 89 سال کی عمر میں انتقال ہوگیا۔ بی جے پی کے ایک سینئر لیڈر سنگھ کو 4 جولائی سے سنجے گاندھی پی جی آئی ، لکھنو¿ کے آئی سی یو میں داخل کیا گیا تھا ۔کلیان سنگھ دو بار یوپی کے وزیر اعلیٰ رہے۔ وہ پہلی بار جون 1991 سے دسمبر 1992 تک اور دوسری بار ستمبر 1997 سے نومبر 1999 تک یوپی کے وزیر اعلیٰ رہے۔ اس کے علاوہ وہ 2014 سے 2019 تک راجستھان کے گورنر بھی رہے۔ ریاستی حکومت نے ان کی موت پر تین روزہ سوگ کا اعلان کیا ہے۔