Taliban kills Afghan folk singer in restive province

کابل: ( اے یو ایس ) افغانستان میں طالبان جنگجوؤں نے ایک لوک گلوکار کو بے دردی سے قتل کردیا ہے۔افغانستان کے سابق وزیرداخلہ مسعود اندرابی نے ہفتے کو ایک ٹویٹ میں ان کے قتل کی اطلاع دی ہے۔مسعود اندرابی نے بتایا ہے کہ ”طالبان نے گاؤں اندراب میں فواد اندرابی کو اس کے گھر سے کھینچتے ہوئے نکالا اور بڑی بے رحمی سے ہلاک کر دیا ۔“ اندراب وادیِ پنج شیر کے نزدیک واقع ہے جہاں طالبان کو احمدمسعود کے زیرقیادت ملیشیاو¿ں اور سابق فوجیوں کی مزاحمت کا سامنا ہے۔طالبان نے افغانستان پر کنٹرول کے چند روز بعد ہی عوامی مقامات پر موسیقی پرپابندی عاید کردی تھی۔

طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے مبیّنہ طورپرامریکی اخبار نیویارک ٹائمز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ اسلام میں موسیقی حرام ہے۔انھوں نے کہا تھا کہ ”اسلام میں موسیقی کی ممانعت ہے۔ ہم اس کو ترک کرنے کے لیے لوگوں پر دباو¿ نہیں ڈالیں گے بلکہ اس کے بجائے یہ امید کرتے ہیں،ہم انھیں اس بات پر آمادہ کرسکتے ہیں کہ وہ اس طرح کے کام نہ کریں۔“

طالبان نے اقتدار سنبھالنے کے بعد سے ماضی میں 1996 سے 2001 تک اپنی پہلی حکومت کے مقابلے میں نرم لب ولہجہ اختیارکیا ہے لیکن اس کے باوجود مختلف حلقوں کی جانب سے ان خدشات کا اظہارکیا جارہا ہے کہ وہ جبرواستبداد پر مبنی معاندانہ کارروائیاں کرسکتے ہیں۔افغانستان کی ایک پاپ سنگرآریانا سعید نے انسٹاگرام پر21 اگست کو ایک پوسٹ میں اطلاع دی تھی کہ وہ ملک سے راہ فراراختیار کرنے میں کامیاب ہوگئی ہیں اور وہ استنبول جارہی ہیں۔

ذبیح اللہ مجاہد نے گذشتہ منگل کو اپنی پریس کانفرنس میں خواتین اور بچّوں سے کہا تھا کہ وہ فی الوقت اپنے گھروں ہی میں رہیں کیونکہ طالبان جنگجوو¿ں کی ایسی تربیت نہیں ہوئی ہے کہ وہ ان کے تحفظ کویقینی بنا سکیں۔