Taliban wants to join CPEC too, Pakistan says it is a good sign

کابل: افغانستان میں حکومت بنانے سے پہلے طالبان چین اور پاکستان کے سر میںسر ملاتا نظر آ رہاہے۔ طالبان نے اب اشارہ دیا ہے کہ اس کی حکومت چین پاکستان اقتصادی راہداری منصوبے میں شامل ہو سکتی ہے۔ طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے کہا کہ وہ حکومت بنانے کے بعد چین پاکستان اقتصادی راہداری سی پی ای سی منصوبے میں شامل ہونا چاہیں گے۔ طالبان کے ترجمان نے یہ یقین دہانی بھی کرائی ہے کہ وہ پاکستان میں مقیم تحریک طالبان کے بارے میں اسلام آباد کے خدشات کو دور کریں گے۔ سی پی ای سی چین کا انتہائی مہتواکانکشی منصوبہ اور بیلٹ اینڈ روڈ انیشی ایٹو کا حصہ ہے۔ اس منصوبے کے تحت سنکیانگ کو چین کے مغربی حصے سے پاکستان میں گوادر بندرگاہ سے جوڑنے کا کام کیا جا رہا ہے۔

سی پی ای سی چین کا سب سے زیادہ مہتواکانکشی منصوبہ ہے اور بیلٹ اینڈ روڈ انیشی ایٹو کا ہی ایک حصہ ہے۔ اس منصوبے کے تحت سنکیانگ کو چین کے مغربی حصے سے پاکستان میں گوادر بندرگاہ سے جوڑنے کا کام کیا جا رہا ہے۔ اس پروجیکٹ میں ریل ، سڑک اور تیل پائپ لائن کے ذریعہ چین سے مغربی ایشیائی ممالک تک کو جوڑنے کا منصوبہ ہے۔ معلوم ہو کہ پاکستان کی خفیہ ایجنسی نے افغانستان میں طالبان کی حکومت بنانے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ پاکستان اب طالبان کے ذریعے افغانستان پر مکمل کنٹرول چاہتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اب طالبان نے پاکستان اور اس کے آقا چین کو خوش کرنے کے لیے سی پی ای سی منصوبے میں شامل ہونے پر آمادگی ظاہر کی ہے۔سال 2015 میں چین نے اس منصوبے کا اعلان کیا۔ منصوبے کی لاگت تقریبا 4.6 ارب ڈالر ہے۔ چین کا ارادہ اس منصوبے کے ذریعے جنوبی ایشیائی ممالک میں ہندوستان اور امریکہ کے اثر و رسوخ کو محدود کرنا اور ان کے تسلط کو بڑھانا ہے۔ چین -پاکستان اقتصادی راہداری کی بھارت سخت مخالفت کر رہا ہے۔

دراصل یہ راہداری پاکستان مقبوضہ کشمیر اور اکسائی چن سے گزرنے والی ہے۔ ہندوستان کشمیر کے ان دونوں حصوں پر اپنا دعویٰ کرتا ہے۔ اسی لیے ہندوستان نے اس پر اعتراضات بھی کئے ہیں۔ اگر یہ راہداری بن جاتی ہے تو پاکستان اور چین کو متنازعہ علاقے سے براہ راست راستہ مل جائے گا۔اس سے قبل طالبان نے چین کواپنا سب سے اہم شراکت دار قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس کو افغانستان کی تعمیر نو اور اس کے تانبے کے بھرپور ذخائر سے فائدہ اٹھانے لئے چین سے امید ہے۔ طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے کہا کہ یہ گروپ چین کے ‘ون بیلٹ ، ون روڈ’ اقدام کی حمایت کرتا ہے ، جو بندرگاہوں ، ریلوے ، سڑکوں اور صنعتی پارکوں کے وسیع نیٹ ورک کے ذریعے چین کو افریقہ ، ایشیا اور یورپ سے جوڑے گا۔ مجاہد نے یہ بھی کہا کہ طالبان روس کو خطے میں ایک اہم شراکت دار کے طور پر بھی دیکھتا ہے اور روس کے ساتھ اچھے تعلقات برقرار رکھے گا۔