New Taliban govt in Afghanistan not inclusive: PM Modi at SCO Summit

دو شنبے( تاجکستان):وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا کہ افغانستان میں نئی طالبان حکومت ملی جلی نہیں ہے نیز افغانستان میں منتقلی اقتدار کسی قسم کے مذاکرات کے بغیر عمل میں آئی ہے۔

وزیر اعظم مودی تاجکستان کے دارالحکومت دوشنبے میں ہائبرڈ موڈ میں منعقد ہونے والی 21 ویں چوٹی کانفرنس کے تحت افغانسان پروقت شنگھائی تعاون تنظیم (ایس سی او) سی ایس ٹی او آؤٹ ریچ سمٹ سے بھی ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کر رہے تھے انہوں نے افغانستان میں طالبان کی حکومت کو مسلط کی گئی حکومت قرار دیا ہے اوراس سے دنیا میں دہشت گردی، بنیاد پرستی، عدم استحکام کا خطرہ اور ان کے ملک میں معاشی بحران بڑھنے کا خدشہ ظاہر کرتے ہوئے شنگھائی تعاون تنظیم (ایس سی او) کے ممالک کو افغانستان کے معصوم لوگوں کو انسانی امداد فراہم کرنے کی اپیل کی۔

افغانستان کی تازہ ترین صورت حال کے حوالے سے بات کرتے ہوئے مودی نے خطہ میں امن و سلامتی کو درپیش چیلنجوں کا ذکر کیا اور کہا کہ افغانستان کے حالات جس طرح کے ہیں اس سے منشیات، غیر قانونی اسلحہ اور انسانی اسمگلنگ کا ریلہ بے قابو ہو جائے گا۔وزیر اعظم مودی نے یہ بھی کہ کہ ایشیائی ممالک کو درپیش سب سے بڑے چیلنجوں کا تعلق بڑھتی بنیاد پرستی سے ہے اور افغانستان کی جو صوت حال ہے اس سے یہ اور بھی عیاں ہو گیا ہے۔اس لیے عالمی برادری پر یہ لازم ہے کہ وہ افغانستان میںنئی حکومت کو تسلیم کرنے کا فیصلہ اجتماعی اور مناسب غور وخوض کے بعد کرے۔