Hindu and Muslim women donates kidney to save each other's husbands life in Dehradun

دہرہ دون: (اے یوایس) تقریباً9ماہ پیشتر سشما اونیال اور سلطانہ علی ایک دوسرے کے لیے اجنبی تھیں اور اترکھنڈ کے دارالحکومت دہرہ دون میں اپنے ہندو اور مسلمان گھرانوں میں زندگی بسر کر رہی تھیں۔دونوں خواتین میں کچھ زیادہ مشترک بھی نہیں تھا سوائے اس کے کہ انہیں اپنے اپنے شوہر، 51 سالہ وکا س اونیال اور 52 سالہ اشرف علی کے لیے گردوں کے ڈونر کی تلاش تھی۔ دونوں افراد 2019 سے گردہ فیل ہونے کی تکلیف سے نمٹ رہے تھے۔

دونوں خاندانوں نے ڈونر کی تلاش میں الگ الگ درخواست جمع کروائی تھی لیکن ان کو میچ نہیں ملا۔طبی طور پر عدم مطابقت کی وجہ سے سشما اور سلطانہ اپنے شوہروں کو گردہ نہیں دے سکتی تھیں۔تاہم رواں سال جنوری میں انہیں ڈاکٹر شہباز احمد کی کال آئی، جو کہ گردوں کے امراض کے ڈاکٹر ہیں اور ویکاس اور اشرف کے علاج سے متعلق معاملات دیکھ رہے تھے۔ دہرہ دون کے ہمالین ہسپتال کے ڈاکٹر شہباز احمد کا کہنا تھا کہ ‘میں ان کی فائلیں دیکھ رہا تھا کہ جب مجھے احساس ہوا سلطانہ کا بلڈ گروپ، اے، ویکاس کے بلڈ گروپ کے ساتھ میچ کرتا ہے جبکہ سشما کا اشرف کے ساتھ کرنا ہے۔ میں نے فوراً دونوں خاندانوں سے رابطہ کیا۔’ڈاکٹر شہباز احمد نے تجویز کیا کہ س±شما اور سلطانہ ایک دوسرے کے شوہروں کو گردہ عطیہ کر دیں لیکن اس کے لیے ایک بات کا حل اہم تھا۔ وہ یہ کہ دونوں خاندان گردے کی پیوندکاری کے لیے اپنے مذہبی اختلافات ایک طرف رکھ سکیں گے۔

ڈاکٹر شہباز احمد کو اندازہ تھا کہ پیوندکاری کی سرجری میں مذہب کا عنصر ضرور درمیان میں آکر رکاوٹ بن سکتا ہے لیکن پھر بھی انہوں نے یہ سوال کیا۔ ‘میں نے جنوری میں دونوں خاندانوں کو ایک دوسرے سے ملوایا اور انہوں نے سرجری کے لیے رضامندی ظاہر کی۔ کچھ ٹیسٹ کروانے کے بعد مجھے پتہ لگا کہ مذکورہ خواتین کے گردے ان دونوں افراد کو عطیہ کیے جا سکتے ہیں ،کچھ ماہ بعد گردوں کی پیوندکاری کی تاریخ تو آئی لیکن کورونا وائرس کی وبا کے باعث یہ عمل تعطل کا شکار ہو گیا۔تاہم 4 ستمبر کو یہ سرجری بالآ خر انجام دے دی گئی۔ اس کے مکمل ہونے میں 10 گھنٹے لگے۔

ڈاکٹر کا کہنا تھا کہ اس سرجری سے دونوں خاندانوں کے درمیان ایک رشتہ قائم ہو گیا ہے اور ایسا کرنا قانونی طور پر دوسروں کے لیے بھی ممکن ہے۔انسانی اعضا کی پیوندکاری ایکٹ 2011 کے تحت اعضا کے تبادلے کی اس صورت میں اجازت ہوتی ہے جب قریبی رشتہ دار عضو حاصل کرنے والے کے ساتھ طبی طور پر ناموافق ہو۔اس صورتحال میں قانون کی طرف سے اجازت ہوتی ہے کہ خون کے رشتوں کے علاوہ بھی لوگ خود سے طبی موافقت رکھنے والے افراد کو اعضا عطیہ کر سکتے ہیں۔ہندوستان میں 20 لاکھ افراد گردے کی پیوندکاری کے منتظر ہیں لیکن ملک میں یہ طلب پوری نہیں ہو رہی۔ قانونی طریقے سے کیے جانے والے عطیوں سے صرف تین سے پانچ فیصد ضرورت پوری ہورہی ہے۔ٹرانسپلانٹ کے عمل میں ایک شخص پر8 ہزار ڈالر تک اخراجات ہوتے ہیں اور اس کو مکمل کرنے میں 10 سے 15 دن لگتے ہیں۔