Abdullah Abdullah dubs Ghani 'traitor', says Doha agreement between US, Taliban was weak

نئی دہلی: افغانستان کے بھگوڑے صدر اشرف غنی کو غدار قرار دیتے ہوئے افغانستان کے معزول چیف ایکزیکٹیو افسر عبد اللہ عبد اللہ نے کہا کہ ہمارے نظام میں بے شمار خامیاں، یکے بعد دیگرے دھاندلی زدہ انتخابات ، غنی کا عوام پر اعتماد نہ کرنا اور ان کے اور قیادت کے درمیان عدم اعتماد اور سب سے بڑھ کر بدعنوانی چند ایسے عوامل ہیں جو ملک میں ایسی صورت حال پیدا کرنے کا باعث بن گئے جو آج ہے۔عبد اللہ عبداللہ ہندوستان کے دارالخلافہ نئی دہلی کے تاج ہوٹل میں منعقد انڈیا ٹوڈے کنکلیو2021سے کابل سے براہ راست ورچوئل خطاب کر رہے تھے۔

انہوں نے خطاب کے دوران یہ بھی کہا کہ دوحہ معاہدے کے تحت طالبان سے جو سمجھوتہ ہوا اس میں امن کا فقدان تھا ۔ ان کے مطابق معاہدے میں کئی شقیں بہت کمزور تھیں۔عبداللہ نے کہا کہ آخر میں ، مذاکرات کے دوران معاہدہ طے کرنا پڑا ، جس پر میں یقین کرتا ہوں۔ یہ ایک راستہ ہونا چاہیے تھا جو لیا گیا تھا۔ امریکہ اور طالبان کے درمیان دوحہ معاہدے پر دستخط اس طرح کہ ہمارے امریکی دوست ، امریکی حکومت اور اس میں شامل تمام فریقوں کی مخالفت کے باوجود ، بالآخر ملک میں امن کی کمی کا باعث بنے۔

اگست کی 14 تاریخ کو ،جب امارت اسلامیہ کی افواج کابل کے دروازوں کے قریب پہنچ گئیں ، اشرف غنی افغانستان سے بھاگ گیا ۔ رائٹرز نے روسی سفارت خانے کے حوالے سے بتایا کہ وہ 169 ملین ڈالر اپنے ساتھ لے کر بھاگا ہے۔امریکہ کے خصوصی انسپکٹر جنرل برائے افغانستان کی تعمیر نو نے حال ہی میں اس کیس کی تحقیقات شروع کرنے کا اعلان کیا ہے۔