India Plans Global Conference on Afghanistan's Takeover by Taliban, Pakistan May be Invited: Report

نئی دہلی:توقع کی جارہی ہے کہ افغانستان میں بدلتی صورت حال پر ہندوستان ایک عالمی کانفرنس کی ،جس میں کئی ملکوں کے قومی سلامتی مشیر شرکت کریں گے، آئندہ ماہ میزبانی کرے گا۔ افغانستان کی سیاسی اور انسانی صورتحال کے حوالے سے 10 نومبر یا نومبر کے وسط میں بلائی جانے والی اس عالمی کانفرنس میں ہندوستان کے علاوہ چین ، روس ، پاکستان ، ایران اور تاجکستان کے قومی سلامتی کے مشیر شرکت کریں گے۔ ٹائمز آف انڈیا کی رپورٹ کے مطابق ہندوستان نے جن ممالک کو مدعو کیا ہے ان کے جواب کا انتظار ہے۔ تاہم فی الحال ایسا کوئی ارادہ نہیں ہے کہ طالبان کو بھی اس اجلاس میں دعو کیا جائے۔البتہ پاکستان کو مدعو کیا جانا خارج ازامکان نہیں کہا جا سکتا۔

دہلی میں افغان حکومت کے سابق سفیر کا کہنا ہے کہ انہیں ابھی تک اس اجلاس میں مدعو نہیں کیا گیا ہے ، لیکن اس بات کی تصدیق کرتا ہے کہ بھارت جلد ہی افغانستان کے بارے میں ایک اجلاس کی میزبانی کرے گا۔امارت اسلامیہ اس اجلاس سے لاعلم ہے اور اس کا کہنا ہے کہ افغان حکومت کی قیادت کو ابھی تک اس اجلاس کے بارے میں آگاہ نہیں کیا گیا ہے۔دوسری جانب ایک ہندوستانی اخبار نے حکام کے حوالے سے بتایا کہ نئی دہلی کے پاس نئی افغان حکومت کو تسلیم کرنے کے لیے پیشگی شرائط ہیں۔

بھارت میں سابق افغان سفیر فرید ماموند زئی نے کہا کہ نئی دہلی میں 10 اور 11 نومبر کو چھ ممالک کے قومی سلامتی کے مشیر ملاقات کریں گے اور ہمیں ابھی تک اس اجلاس میں مدعو نہیں کیا گیا ہے۔بین الاقوامی تعلقات کے ماہر طارق فرہادی نے کہا کہ ہندوستان افغانستان میں متعدد دہشت گرد گروہوں سے خوفزدہ ہے۔ اتفاق سے پاکستان دن رات ایک ہی گروہوں سے خوفزدہ ہے۔ لیکن ہندوستان کو اس حقیقت کا نوٹ لینا چاہیے کہ پاکستان افغانستان کی نمائندگی نہیں کر سکتا ، اور بہتر یہ ہو گا کہ کابل میں حکمران حکومت کے کسی فرد کو سکیورٹی مسائل کے لیے مدعو کیا جائے۔