China itself sits on debt time bomb

بیجنگ: دنیا کے کئی ممالک کو اپنے قرضوں کے جال میں پھنسانے والا ملک چین خود قرضوں کے ٹائم بم پر بیٹھا ہوا ہے۔ ڈبلیو آئی او این کی رپورٹ کے مطابق چین قرضوں میں اس قدر ڈوبا ہوا ہے کہ اس کی پراپرٹی مارکیٹ خطرناک بحران سے گزر رہی ہے۔

رپورٹ کے مطابق دنیا کی دوسری سب سے بڑی معیشت چین کو 4 ٹریلین ڈالر کے قرضے کے بم کا سامنا ہے۔قرضوں رقم کو چھپانے کی کوششوں کے درمیان، شی جنپنگ کے حکام نے بڑے پیمانے پر ہاؤسنگ اور انفراسٹرکچر کو فروغ دینے کے لیے 4 ٹریلین ڈالر کا قرض اکٹھا کیا ہے۔ ڈبلیو آئی او این کے مطابق، چینی پراپرٹی دگج گرینڈ میں جاری بحران کے درمیان، چین قرضوں کا ایک خطرناک بلبلہ چھپا رہا جو کسی بھی وقت پھٹ سکتا ہے۔ رپورٹ کے مطابق چینی حکام نے قرضوں
کے اس خطرناک بلبلے کو چھپانے کی کوشش کی ہے جو ایک ٹک ٹک ٹائم بم ہے۔

خبر کے مطابق چین کا کل قرضہ اب اس کی جی ڈی پی کے 270 فیصد سے زیادہ ہے اور یہ ایک انتہائی تشویشناک حقیقت ہے۔2020 میں چین کا بقایا غیر ملکی قرضہ 2.4 ٹریلین ڈالر تک پہنچ گیا ہے۔ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ)آئی ایم ایف( نے بھی چین کو خبردار کیا ہے کہ اگر جلد ضروری اقدامات نہ کیے گئے تو بیجنگ مالی مشکلات کا شکار ہو جائے گا۔

چین دنیا کی دوسری بڑی معیشت ہے اور اس کا مالیاتی بحران پوری دنیا کو متاثر کرے گا۔آئی ایم ایف کا اندازہ ہے کہ چین کا کل قرض اس کی جی ڈی پی کے 270 فیصد تک پہنچ گیا ہے۔ اگر حالات ایسے ہی رہے تو 2022 تک یہ قرضہ جی ڈی پی کے 300 فیصد تک ہو جائے گا۔سب سے زیادہ خراب صورتحال چین میں کارپوریٹ اور گھریلو قرضوں کی ہے۔ کارپوریٹ قرضہ جی ڈی پی کا 165% سے زیادہ ہے اور گھریلو قرضہ بھی تیزی سے بڑھ رہا ہے۔