At least 600 ISIS-K affiliates arrested so since mid-August: Mujahid

کابل: جنرل ڈائریکٹوریٹ آف انٹیلی جنس خلیل ہمراز نے کہا ہے کہ گذشتہ تین ماہ کے دوران دولت اسلامیہ فی العراق و الشام خراسان (داعش ۔ خراسان ) سے وابستہ کم و بیش600انتہاپسندوں کو گرفتار کیا جا چکا ہے۔ انہوں نے قومی دارالخلافہ میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ گرفتاریوں کے علاوہ داعش کے 33سے زیادہ انتہا پسند مارے بھی گئے ہیں۔

بر سر اقتدار آنے کے بعد اپنی پہلی پریس کانفرنس میں انہوں نے مزید کہا کہ ملک میں امن و سلامتی کی مجموعی صورت حال بہتر ہو گئی ہے اور روز بروز اس میں سدھار آتا جا رہا ہے۔ ہمراز نے مزید کہا کہ گذشتہ تین ماہ کے دوران 82مشتبہ اغوا کنندگان ،گرفتار کیے گئے ہیں۔ 12یرغمال رہا کرائے گئے اور دستاویزات سے چھیڑ چھاڑ کرنے کے الزام میں76افراد گرفتار کیے جاچکے ہیں۔

اسی دوران طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے ،جو پریس کانفرنس میں موجود تھے، کہا کہ افغانستا ن میں سرگرم آئی ایس آئی ایس خراسان عراق اور شام کے حقیقی آئی ایس آئی ایس لڑاکے نہیں ہیں۔ مجاہد نے یہ بھی کہا کہ افغانستان کی فضائیہ دوبارہ فعال ہو گئی ہے اور افغان پائلٹوں کو وطن واپس آجانے اور فضائیہ جوائن کر لیں۔