Armenia and Azerbaijan agree ceasefire after border clash

یریوان: (اے یوایس)آرمینیا کی حکومت کا کہنا ہے کہ آذربائیجان کے ساتھ مسلح جھڑپوں کے بعد ماسکو کی مدد سے جنگ بندی معاہدہ طے پا گیا ہے۔ آرمینیا کے مطابق ان جھڑپوں میں آذربائیجان کے فورسز کے ہاتھوں اس کے 15فوجی ہلاک ہوئے۔آرمینیا کی وزارت دفاع نے اعلان کیا کہ روس کی مدد سے آذربائیجان کے ساتھ جنگ بندی معاہدہ طے پا گیا، جس کی وجہ سے سرحد پر ہونے والی مسلح جھڑپیں رک گئی ہیں۔ اس سے قبل آرمینیائی حکومت نے اپنے ایک بیان میں کہا تھا کہ پرانے دشمنوں کے ساتھ تازہ ترین جھڑپوں میں اس کے متعدد فوجی ہلاک ہو گئے۔

جنگ بندی کا یہ اعلان ایک ایسے وقت ہوا جب یورپی کونسل کے صدر چارلس مشیل نے کہا کہ انہوں نے آذربائیجان کے صدر الہام علی یوف اور آرمینیا کے وزیر اعظم نکول پشینیان سے بات چیت کی اور ان سے کہا ہے کہ ”خطے کی مشکل صورتحال” کا الزام ایک دوسرے پر عائد کرنے کے بجائے فوری طور جنگ بندی کا آغاز کریں اور کشیدگی کو ختم کریں۔انہوں نے اپنی ایک ٹویٹ میں لکھا، ”یورپی یونین جنوبی کوہ قاف علاقے کی خوشحالی اور اس کے استحکام کے لیے کشیدگی پر قابو پانے کے لیے اپنے شراکت داروں کے ساتھ کام کرنے کے لیے پر عزم ہے۔”فرانس کی وزارت خارجہ نے بھی یورپی کونسل کے صدر کے بیان کی حمایت کی اور اپنے ایک بیان میں کہا، ”فرانس تمام فریقوں سے اس جنگ بندی کا احترام کرنے کا مطالبہ کرتا ہے جس کا اعلان انہوں نے سہ فریقی مذاکرات کے بعد9 نومبر 2020 کو کیا تھا۔”اس سے قبل آرمینیا کی حکومت نے کہا تھا کہ آذربائیجان کے ساتھ اس تازہ ترین لڑائی میں سرحد پر اس کے کم از کم 15 فوجی ہلاک ہو گئے جبکہ آذربائیجان کے فورسز نے اس کے 12 فوجیوں کو پکڑ لیا ہے۔ اس صورت حال کے پیدا ہونے پر حکومت نے سرحد کے دفاع میں روس سے مدد کی درخواست کی تھی۔

اس دوران کریملن نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ روسی صدر ولادمیر پوٹن نے آرمینیا کے وزیر اعظم نکول پشینیان سے فون پر بات چیت کی ہے۔ روس کے وزیر دفاع سرگئی شوئیگو نے بھی آرمینیا اور آذربائیجان کے وزرا دفاع کے ساتھ بات چیت کی اور ان سے فوری طور پر لڑائی روکنے اور کشیدگی کو ختم کرنے کو کہا۔دونوں ملکوں کے درمیان سرحد پر یہ تازہ جھڑپیں متنازعہ نگورنو کاراباخ علاقے پر لڑی جانے والی جنگ کے ایک برس مکمل ہونے پر ہوئی ہیں، جس میں 6,500 سے زیادہ لوگ مارے گئے تھے۔ یہ جنگ چھ ہفتوں تک چلی تھی اور پھر ماسکو کی ثالثی سے ایک امن معاہدہ طے پایا تھا اور جنگ ختم ہوگئی تھی۔

تاہم آرمینیا کو نگورنوکارا باخ کا ایک بڑا علاقہ چھوڑنا پڑا تھا۔ مسلم اکثریتی آذربائیجان اور آرتھوڈکس مسیحی اکثریتی آرمینیا کے مابین کشیدگی کا باعث نگورنو کاراباخ کا علاقہ ہے۔ یہ علاقہ آذربائیجان کا حصہ ہے لیکن سابقہ سوویت یونین کے انہدام کے بعد سن 1991ءمیں یہاں کے نسلی علیحدگی پسندوں نے اس پر قبضہ کرتے ہوئے اپنی حکومت قائم کر لی تھی۔ اس تنازعے میں اب تک تقریباً تیس ہزار افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ گزشتہ برس ہونے والی جنگ میں نگورنو کاراباخ کے زیادہ تر علاقوں پر آذربائیجان نے دوبارہ قبضہ کر لیا تھا۔جس علاقے میں گزشتہ برس جھڑپیں ہوئی تھیں، وہاں روسی امن فوجی تعینات ہیں۔ آرمینیا میں روس کا ایک فوجی اڈہ بھی موجود ہے جبکہ اس تنازعے میں آذربائیجان کو ترکی کی حمایت حاصل ہے۔