UP: 4 people of same family murdered in Prayagraj

لکھنؤ: اتر پردیش کے شہر پریاگ راج میں اجتماعی قتل کی دل دہلا دینے والی واردت میں دلت خاندان کے چارافراد کو ان کے گھر میں گھس کر قتل کر دیا گیا ۔ مقتولین میں سترہ سالہ لڑکا اور تیرہ سالہ بچی بھی شامل ہے۔ پریاگ راج سے تقریباً تیس کلومیٹر دور پھاپھامﺅ پولیس تھانے کے تحت آنے والے موہن گنج گاو¿ں میں یہ دلخراش واردات انجام دی گئی۔

گاؤں میں رہنے والے دلت طبقے کے پھول چند ، ان کی اہلیہ مینو دیوی ، بیٹی گڑیا اور بیٹا بابو کو علی الصباح اس وقت قتل کیا گیا جب وہ سب سو رہے تھے۔ لیکن گڑیا نام کی بچی کو قتل سے پہلے جنسی زیادتی کا شکار بنایا گیا۔اس کی لاش ایک الگ کمرے میں پڑی پائی گئی جبکہ باقیوں کی لشیں وہیں پڑی ملیں جہاں وہ سو رہے تھے۔ قتل کی واردات انجام دینے والے افراد نے کلہاڑی کا استعمال کیا۔مقتولین کے رشتہ داروں نے بتایا کہ گاو¿ں کے بعض دبنگ افراد دلت خاندان کی زمین پر قبضہ جمانے کی کوشش کر رہے تھے۔

ان کے خلاف پھول چند کی طرف سے پولیس تھانے میں ایس سی ایس ٹی ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کرایا گیا تھا۔ پولیس میں مقدمہ درج کرانے کے بعد آپسی رنجش نے مزید شدت اختیار کرلی۔ پھول چند کی رشتہ دار رادھا دیوی نے الزام لگایا کہ ایس سی ایس ٹی ایکٹ کے تحت کیس درج کرانے کے با وجود پولیس نے نام زد لوگوں کے خلاف کوئی کار روائی نہیں کی۔بتایا جاتا ہے کہ یہ واردات انجام دینے والا ملزم اعلیٰ ذات سے تعلق رکھتا ہے۔