Saudi Arabia bans flights to and from 7 African countries due to Omicron

جوہانسبرگ: (اے یوایس) جنوبی افریقہ میں دریافت ہونے والی کورونا وائرس کی نئی قسم ’اومی کرون‘ کا پھیلاؤ تیزی سے جاری ہے، جبکہ وائرس کا پھیلاو¿ روکنے کے لیے مختلف ممالک کی جانب سے اقدامات بھی کیے جا رہے ہیں۔سعودی وزارتِ داخلہ نے ملاوی، زیمبیا، مڈغاسکر، ماریطانیہ سمیت 7 ممالک کے لیے پروازوں کی آمد و رفت روک دی۔سعودی عرب اس سے پہلے جمعے کو جنوبی افریقہ، نمیبیا، بوٹسوانا، زمبابوے، موزمبیق، لیسوتھو اور ایسواتینی کے لیے پروازیں معطل کر چکا ہے۔

مالدیپ نے جنوبی افریقہ، بوٹسوانا، زمبابوے، موزمبیق، نمیبیا، لیسوتھو اور ایسواتینی کے مسافروں پر پابندی لگا دی اور گزشتہ 2 دنوں میں ان 7 افریقی ملکوں سے آ نے والوں کو 14 دن قرنطینہ میں رہنا ہو گا۔اسرائیل نے بھیہفتہ کے روز سے تمام غیر ملکیوں کے لیے اپنی سرحدیں بند کرنے کا اعلان کیا ہے۔آسٹریلیا میں اومی کرون قسم کے کیسز رپورٹ ہوئے ہیں آسٹریلین طبی حکام کے مطابق جنوبی افریقہ سے سڈنی آنے والے 2 مسافروں میں وائرس کی تصدیق ہوئی ہے۔

ماہرین کے مطابق پریشانی کی بات یہ ہے کہ نئی قسم میں مجموعی طور پر 50 جینیاتی تبدیلیاں دیکھی گئی ہیں جبکہ اس کی نسبت کچھ عرصہ قبل دنیا کو اپنی لپیٹ میں لینے والی کورونا کی ڈیلٹا قسم میں صرف 2 جینیاتی تبدیلیاں پائی گئی تھیں۔برطانوی طبی ماہرین کے مطابق بھی کورونا کی یہ قسم اب تک سامنے ا?نے والی تمام اقسام میں سب سے زیادہ خطرناک ہے۔رپورٹس کے مطابق خطرناک وائرس کیسز کی جنوبی افریقا، یورپ اور اسرائیل میں تصدیق ہوچکی ہے۔ وائرس کا مزید پھیلاو¿ روکنے کے لیے عالمی سطح پر ہنگامی اقدامات کا سلسلہ جاری ہے۔برطانیہ، امریکا، کینیڈا، فرانس، جرمنی، اٹلی، نیدرلینڈز، آسٹریا اور یورپی یونین نے افریقی ممالک پر سفری پابندیاں لگادیں جبکہ سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، بحرین اور مراکش نے بھی سفری پابندیاں عائد کر دیں۔