Omicron variant is 'cause for concern, not a cause of panic : Joe Biden

واشنگٹن:(اے یو ایس ) صدر جو بائیڈن نے کورونا وائرس کی سامنے آنے والی نئی قسم ’اومیکرون‘ کو تشویش کا سبب قرار دیا، مگر کہا ہے کہ یہ دہشت زدہ ہونے کی وجہ نہیں ہے۔ پیر کے روز ایک بیان میں صدر نے کہا کہ وہ امریکہ میں بڑے پیمانے پر لاک ڈاو¿ن پر غور نہیں کر رہے ہیں۔انہوں نے امریکی شہریوں پر زور دیا ہے کہ وہ بوسٹر شاٹ سمیت ویکسین کا کورس مکمل کریں اور عوامی جگہوں پر جاتے ہوئے دوبارہ ماسک لگانا شروع کریں۔وائٹ ہاوس میں گفتگو کرتے ہوئے صدر نے کہا کہ یہ بات یقینی ہے کہ ومیکرون قسم کا وائرس امریکہ بھی پہنچے گا۔ تاہم انہوں نے کہا کہ امریکی شہریوں کو بچانے کے لیے جو چیزیں ضروری ہیں، وہ موجود ہیں۔ جیسا کہ منظور شدہ ویکسین اور بوسٹر شاٹ۔بائیڈن نے امریکہ کے اندر، ایک اندازے کے مطابق، پانچ سال کی عمر سے زیادہ کے80 ملین یعنی 8 کروڑ ویکسین نہ لگوانے والے افراد سے اپیل کی کہ وہ ویکسین لگوا لیں۔

انہوں نے باقی شہریوں سے کہا کہ وہ ویکسین کی دوسری خوراک کے چھ ماہ بعد بوسٹر شاٹ لگوا لیں۔ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق امریکہ میں وبائی امراض کے چوٹی کے ماہر اور کوویڈ 19-کے مسئلے پر صدر کے مشیر ڈاکٹر انتھونی فاوچی نے بھی بائیڈن کے بیان کی تائید کی۔ انہوں نے پیر کے روز کہا کہ سائنس دان آئندہ ایک دو ہفتوں میں یہ جاننے کے قابل ہو جائیں گے کہ کوویڈ19- کے خلاف موجودہ ویکسین کس حد تک ا ومیکرون قسم کے خلاف موثر ہے اور یہ قسم پہلے سے دریافت اقسام کے مقابلے میں کس قدر خطرناک ہے۔کورونا کا نیا ویرئینٹ ایک ایسے نئے چیلنج کے طور پر سامنے آیا ہے، جب صدر بائیڈن عالمی وبا کو کنٹرول میں رکھنے، امریکی معیشت پر کرونا اثرات کے خاتمے اور ملک کے اندر تعطیلات کے دوران زندگی کے معمول کی طرف آنے کے احساس کو برقرار رکھنے کی کوشش کر رہے ہیں۔