Saudi Arabia calls for OIC meeting on Afghanistan

ریاض:سعودی عرب نے اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کے رکن ممالک سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ افغانستان میں انسانی صورت حال پر غور و خوض کے لیے ہنگامی اجلاس بلائیں۔ جس میں ملک میں انسانی صورتحال پر تبادلہ خیال کرنے کے ساتھ ساتھ افغانستان کے لوگوں کو انسانی امداد فراہم کرنے کے بھی اقدامات کیے جائیں ۔سعودی عرب نے کہا ہے کہ افغانستان کی بگڑتی ہوئی صورتحال ملک میں عدم استحکام کا باعث بنے گی جس کے علاقائی اور عالمی سلامتی کے لیے سنگین نتائج ہوں گے۔ سعودی عرب نے تنظیم کے رکن ممالک کے ساتھ ساتھ بین الاقوامی تنظیموں کو اجلاس میں شرکت کرنے کی تلقین کی۔

دریں اثنا پاکستان نے اسلام آباد میں17دسمبر کو کانفرنس کی میزبانی کی پیش کش کی ہے۔ پاکستانی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ ان کا ملک سربراہی اجلاس کی میزبانی کرے گا۔ قریشی کا کہنا ہے کہ اسلامی تعاون تنظیم کو افغانستان میں موجودہ انسانی صورتحال کو بہتر بنانے کے لیے مل کر کام کرنا چاہیے۔دوسری جانب امارت اسلامیہ اس ملاقات کا خیرمقدم کرتی ہے اور اس اجلاس میں موجودہ حکومت کے نمائندے کا مطالبہ کرتی ہے۔قریشی نے کہا کہ آج سعودی عرب کے بادشاہ اور اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کے سربراہ نے افغانستان کی صورتحال پر او آئی سی وزرائے خارجہ کا غیر معمولی اجلاس منعقد کرنے کا ایک بہت اہم فیصلہ کیا ہے۔ پاکستان اس فیصلے کی حمایت کرتا ہے اور 17 دسمبر کو اسلام آباد میں اجلاس کی میزبانی کے لیے تیار ہے۔

دوسری جانب کابل کو توقع ہے کہ اجلاس میں افغانستان سے ایک نمائندہ شرکت کرے گا۔ہم توقع کرتے ہیں کہ اس اجلاس میں افغانستان کے اہم مسائل، خاص طور پر وہ معاشی مسائل جن کا عوام کو سامنا ہے، اور جن کے لیے بہت زیادہ مدد کی ضرورت ہے، پر بات کی جائے گی، اور ہمیں امید ہے کہ یہ اجلاس ان کا ازالہ کرے گا۔ امارت اسلامیہ کے نائب ترجمان، احمد اللہ واثق نے کہا کہ معاشی چیلنجوں کے حل پر غور کریں۔اسلامی تعاون تنظیم کے 57 ارکان ہیں اور افغانستان اس کے بانیوں میں سے ایک ہے۔ خیال کیا جا رہا ہے کہ یہ ملاقات افغانستان کے لیے سود مند ثابت ہو سکتی ہے۔

بین الاقوامی تعلقات کے ماہر لطیف نظری نے کہا کہ اسلامی تعاون کی تنظیم (او آئی سی) افغانستان کے ساتھ اسٹریٹجک تعلقات اور افغانستان میں معیشت کو کھولنے کے لحاظ سے، افغانستان کی سیاسی پیش رفت میں اہم کردار ادا کر سکتی ہے۔ بین الاقوامی تعلقات کے ماہر فخرالدین قاری زادہ نے کہا کہ ان ملاقاتوں کا انعقاد اس وقت مفید ہو گا جب ہمارے پاس ایک ایسا سیاسی نظام ہو جس میں قومی اور بین الاقوامی قانونی حیثیت ہو اور اس کے پاس ایک آزاد، فعال اور فعال خارجہ پالیسی بھی ہو۔ امارت اسلامیہ کے اقتدار میں آنے کے بعد افغانستان پر یہ ساتواں اجلاس ہے۔افغانستان سے متعلق چھ اہم علاقائی اور عالمی اجلاس پہلے ہی ماسکو، تہران، اسلام آباد، دہلی، روم میں جی ٹوئنٹی اور اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں منعقد ہو چکے ہیں۔