Canada PM Justin Trudeau announces diplomatic boycott of Beijing Winter Olympics

ٹورنٹو: چین میں مسلم ایغوروں پر مظالم اور انسانی حقوق کی صریح خلاف ورزی کے باعث کناڈا نے بھی بیجنگ میںہونے والے آئندہ سرمائی اولمپک اجلاس کا سفارتی بائیکاٹ کرنے کا اعلان کر دیا۔بدھ کے روز اوٹاوا میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کناڈیائی وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو نے کہا کہ کناڈا ان گیمز کے لیے، جو 4 سے 20 فروری تک چینی دارالحکومت میں منعقد ہوں گے، کوئی سرکاری وفد نہیں بھیجے گا۔

انہوں نے کہا کہ”ہم گزشتہ کئی سالوں سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے بارے میں اپنے گہرے تحفظات کے بارے میں بہت واضح رہے ہیں اور یہ انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر ہمارے گہری تشویش کا اظہار کرنے کا ایک تسلسل ہے۔“ٹروڈو نے مزید کہا کہ البتہ کناڈا کے کھلاڑی اولمپکس میں ضرور شرکت کریں گے۔یہ اقدام آسٹریلیا اور امریکہ کے اسی طرح کے فیصلوں کے بعد ہے، جہاں صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ نے اپنے مغربی علاقے سنکیانگ میں مسلم ایغوروں کے ساتھ چین کے سلوک کو اس کے اولمپکس کے بائیکاٹ کی وجہ قرار دیا۔

وائٹ ہاؤس کی پریس سکریٹری جین ساکی نے اس ہفتے کے شروع میں صحافیوں کو بتایا کہ امریکی سفارتی یا سرکاری نمائندگی ان گیمز کو معمول کے مطابق کاروبار سمجھے گی ۔ اور ہم ایسا نہیں کر سکتے۔”برطانیہ کے وزیر اعظم بورس جانسن نے بھی بدھ کے روز کہا کہ بیجنگ میں اولمپکس کا “مؤثر طریقے سے سفارتی بائیکاٹ کیا جائے گا“ ۔جانسن نے پارلیمنٹ میں کہا کہ کسی وزیر کے شرکت کی توقع نہیں ہے اور نہ ہی کوئی عہدیدار۔سفارتی بائیکاٹ سے مغربی ممالک اور چین کے درمیان تعلقات مزید کشیدہ ہونے کا خطرہ ہے، جس نے بدھ کے روز کہا کہ اس نے برطانوی وزرا کو گیمز میں مدعو نہیں کیا ہے۔

لندن میں چینی سفارت خانے کے ترجمان نے کہا کہ بیجنگ سرمائی اولمپکس دنیا بھر کے اولمپک کھلاڑیوں اور سرمائی کھیلوں کے شائقین کا اجتماع ہے، کسی بھی ملک کے لیے سیاسی جوڑ توڑ کا آلہ نہیں ہے۔ترجمان نے کہا کہ بیجنگ سرمائی اولمپکس میں سرکاری عہدیداروں کی موجودگی کو مسئلہ بنانا جوہر میں ایک سیاسی گند پھیلانے کی مہم ہے۔دریں اثنا، کینیڈا کے اولمپکس کے بائیکاٹ سے چین کے ساتھ پہلے سے کشیدہ تعلقات مزید خراب ہونے کی ضمانت دی جاتی ہے۔ 2018 میں چینی حکام کی جانب سے دو کناڈیائی تاجروں کو جاسوسی کا الزام لگا کر حراست میں لینے کے بعد تعلقات مزید خراب ہوئے۔اوٹاوا نے کہا کہ یہ اقدام امریکی حوالگی کی درخواست پر ہواوے کے ایگزیکٹو مینگ وانڑو کی گرفتاری کا بدلہ ہے – لیکن چین اس الزام کی تردید کرتا ہے۔