Jamaat-i-Islami announces country-wide protests against Imran Khan govt

پشاور: پاکستان میں بڑھتی ہوئی مہنگائی کے حوالے سے اپوزیشن جماعتوں نے عمران خان حکومت کے خلاف محاذ کھول دیا ہے۔ پاکستان کی جماعت اسلامی پارٹی نے منی بجٹ واپس لینے کے لیے عمران خان حکومت پر دباؤ ڈالنے کے لیے ملک گیر احتجاجی تحریک چلانے کا اعلان کیا ہے۔ پاکستانی اخبار ڈان کی رپورٹ کے مطابق جماعت اسلامی کے امیر مولانا سراج الحق نے کہا ہے کہ جماعت اسلامی اسلام آباد میں آخری دھرنے سے قبل تمام بڑے شہروں میں 100 دھرنے دے گی۔

انہوں نے بتایا ہے کہ تحریک کے پروگرام کا جلد اعلان کیا جائے گا۔انہوں نے اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے گورنر کو ہٹانے کی بھی اپیل کی ہے۔ واضح ہو کہ حال ہی میں عمران خان کی پارٹی پاکستان تحریک انصاف نے قومی اسمبلی میں منی بجٹ پاس کیا ہے۔ پاکستان میں بڑھتی ہوئی مہنگائی کے درمیان مولانا سراج نے کہا ہے کہ حکومت بنیادی اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں 50 فیصد تک کمی کرے۔ انہوں نے وارننگ دیتے ہوئے کہا کہ اگر عمران خان حکومت نے قیمتیں کم نہ کیں تو حکومت کو عوام کے غصے کا سامنا کرنے کے لیے تیار رہنا چاہئے۔

مولاناسراج نے کہا کہ پارٹی کا آئندہ دھرنا پاکستان تحریک انصاف کے تابوت میں آخری کیل ثابت ہو گا۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ پاکستان کی دیگر اپوزیشن جماعتیں جیسے پاکستان پیپلز پارٹی اور پاکستان مسلم لیگ نواز ملکی معیشت کو تباہ کرنے میں برابر کی ذمہ دار ہیں۔ انہوں نے عمران حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ حکومت نے اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں 100 سے 300 فیصد اضافہ کر دیا ہے۔ انہوں نے پاکستانی روپے کی گرتی ہوئی قدر پر بھی حکومت کو نشانہ بنایا۔ موجودہ معاشی بحران کے پیش نظر انہوں نے کہا ہے کہ ملک کا جوہری پروگرام واپس لیا جائے۔