Turkey, Qatar reach preliminary agreement on Kabul airport

کابل: ترکی کے سفارتی ذراع کے حوالے سے رائٹرز کے مطابق افغانستان کے دارالحکومت کابل کے انٹرنیشنل ہوائی اڈے کا نظم و نسق سنبھالنے کے لیے ترکی اور قطر کی حکومتوں کے درمیان ابتدائی ماہدہ ہوگیا۔وزارت نقل و حمل اور شہری ہوابازی نے بھی اس کی تصدیق کر دی کہ افغانستان کے اصل ہوائی ادے کا انتظام سنبھالنے کے لیے ترکی اور قطر کی ٹیکنیکل ٹیموں کے ساتھ اس کا معاہدہ ہو گیا ہے۔واضح ہو کہ اس ہفتے امارت اسلامیہ نے دونوں ممالک کے اعلیٰ سطحی وفود کے ساتھ ملک کے ہوائی اڈوں کی ترکی اور قطر کو منتقلی کے حوالے سے تفصیلی گفتگو کی تھی۔

دوسرے نائب وزیراعظم اور امارت اسلامیہ کے دیگر اعلیٰ حکام نے قطر کے خصوصی نمائندے، ترکی کے سفیر اور دونوں ممالک کے ٹیکنیکل گروپ کے ساتھ ملک کے پانچ ہوائی اڈوں کی ایوی ایشن سیکیورٹی، زمینی خدمات اور فضائی حدود کے بارے میں تبادلہ خیال کیا ۔وزارت نقل و حمل اور ہوا بازی کا کہنا ہے کہ امارت اسلامیہ نے ترکی اور قطر کے تکنیکی گروپوں کے ساتھ ملک کے ہوائی اڈوں کی ایوی ایشن سیکیورٹی کے حوالے سے ایک ابتدائی معاہدہ کیا ہے اور توقع ہے کہ اس وزارت کا تکنیکی گروپ آئندہ ہفتے دوحہ کا سفر جاری رکھے گا۔

نقل و حمل اور ہوا بازی کی وزارت کے ترجمان امام الدین احمدی نے کہا کہ ہوا بازی اور ہوائی اڈے کے تحفظ پر ایک عم معاہدہ ہوا ہے۔ تاہم ضرورت اس بات کی ہے کہ اس کی وضاحت ہونی چاہیے کہ ٹیکنیکل معاملات کون سے شعبوں کی ضرورت ہے۔۔ قطری وزارت خارجہ نے ٹویٹر پر یہ بھی لکھا ہے کہ قطری اور ترکی کے وفود نے امارت اسلامیہ کے ساتھ کابل ایئرپورٹ کے انتظام پر دو روزہ دو روزہ مذاکرات کیے ہیں۔وزارت نے ایک بیان میں کہا کہ تینوں فریقوں نے آئندہ ہفتے دوحہ، قطر میں مذاکرات کا ایک اور دور مکمل کرنے پر اتفاق کیا ہے۔

افغانستان شہری ہوابازی اتھارٹی کے سربراہ محمد قاسم وفائی زادہ نے کہا کہ کابل ہوائی اڈے کا انتظام افغان ایوی ایشن اتھارٹی اور حکومت کے زیر انتظام رہے گا، اور ہم صرف وہ خدمات غیر ملکی کمپنیوں کے حوالے کریں گے جہاں ہم اپنے پاس پاس تکنیکی ٹیموں کی کمی محسوس کریں گے،دریں اثنا، کچھ سرمایہ کار اہم تجارتی سامان کی منتقلی کے عمل میں بڑی ایوی ایشن کمپنیوں کی پروازوں کی کمی کے بارے میں بات کرتے ہیں۔ایک ماہر اقتصادیات سید مسعود نے کہا کہ جتنا جلد ہو اتنا بہتر ہے۔یہ تجارت، برآمدات و درآمدات ،مال برداری اور نقل و حمل جیسے متعدد پہلوو¿ں سے افغانستان کے حق میں نہایت سودمند ثابت ہوگا۔ چیمبر آف انڈسٹریز اینڈمائنز کے سرباہ شیر باز کامین زادے نے کہا کہ بین الاقوامی پروازوں کی کمی کے باعث میری کمپنی کو 3000ڈالر کا خسارہ ہوا ہے۔