India expresses 'deep concern' over attack on Gurudwara in Kabul

نئی دہلی/کابل: (اے این آئی): ہندوستان نے ہفتہ کی صبح افغانستان کے دارالحکومت کابل میں ایک گرودوارے کو ہدف بنا کر کیے جانے والے دھماکوں اور فائرنگ پر تشویش کا اظہار کیا ہے اور کہا ہے کہ وہ صورت حال پر گہری نظر رکھے ہوئے ہے۔وزارت خارجہ کے ترجمان ارندم باگچی نے ایک بیان میں کہا کہ ہمیں اس شہر میں اقع مقدس گرودوارہ پر حملے کے بارے میں کابل سے موصول ہونے والی اطلاعات پر گہری تشویش ہے۔ ہم صورتحال پر گہری نظر رکھے ہوئے ہیں اور اس جانب کی جانے والی پیش رفت کے بارے میں مزید تفصیلات کا انتظار کر رہے ہیں۔

مقامی میڈیا کے مطابق گذشتہ روز کابل میں کارتے پروان کے علاقے میں گردوارہ کے قریب سے کم از کم دو دھماکوں کی اطلاع ملی جس میں ایک سکھ سمیت تین ہلاک ہوئے ہیں ۔ ذرائع کے مطابق داعش خراسان نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔ دھماکے ہوتے ہی افغانستان کے طلوع نیوز نے ٹویٹ کیا۔ طلوع نیوز کی طرف سے شائع کی گئی تصاویر اور ویڈیوز میں علاقے سے دھوئیں کے گہرے سیاہ بادل اٹھتے ہوئے دکھائی دے رہے ہیں۔

بی جے پی کے منجندر سنگھ سرسا نے کہا کہ انہوں نے گرودوارہ کارتے پروان کے صدر گرنام سنگھ سے بات کی ہے، جنہوں نے انہیں بتایا کہ یہ واقعہ صبح سویرے اس وقت پیش آیا جب ایک گرنتھی صبح کی پہلی عبادت پرکاش کے لیے گرودوارے کے اندر جا رہا تھا ۔ابتدائی اطلاعات میں بتایا گیا تھا کہ گوردوارے کے گیٹ کے باہر ایک دھماکہ ہوا جس میں کم از کم دو افغان ہلاک ہوئے۔ اس کے بعد کمپلیکس کے اندر دو دھماکے ہوئے، گوردوارے کے قریب واقع کچھ دکانوں میں آگ لگ گئی ۔