With No Fuel and No Cash, Sri Lanka Keeps Schools Closed

کولمبو: سری لنکا معاشی بحران کے باعث گزشتہ کئی ماہ سے بجلی کی بڑے پیمانے پر بندش کے ساتھ ساتھ کھانا پکانے کی گیس، ادویات اور خوراک سمیت اشیائے ضروریہ کی شدید قلت کا شکار ہے۔ وجیسیکرا نے کہا کہ بنیادی مسئلہ ڈالر کی کمی ہے اور انہوں نے بیرون ملک کام کرنے والے تقریبا 20 لاکھ سری لنکن شہریوں سے اپیل کی کہ وہ غیر رسمی ذرائع کے بجائے اپنی غیر ملکی کرنسی کمائی ہوئی آمدنی گھر بھیجیں۔دریں اثنا نقدی کی تنگی کا شکار سری لنکا نے ا سکولوں کو مزید ایک ہفتے کے لیے بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے کیونکہ اساتذہ اور والدین کے پاس اپنے بچوں کو اسکول بھیجنے کے لیے کافی ایندھن نہیں ہے۔

وزیر توانائی نے ملک سے باہر رہنے والے شہریوں سے اپیل کی ہے کہ وہ غیر رسمی ذرائع کے بجائے اپنی غیر ملکی کرنسی کمائی ہوئی آمدنی کو بینکوں کے ذریعے گھر بھیجیں تاکہ ملک میں زرمبادلہ کی کمی پر قابو پایا جا سکے۔ حکام نے کہا کہ کوئی بھی سپلائر بھاری مقروض جزیرے والے ملک کو ایندھن دینے کے لیے تیار نہیں ہے۔ دستیاب ایندھن صرف چند دنوں کے لیے چلے گا، جو ضروری خدمات کے لیے دیا جائے گا۔یہ صحت اور بندرگاہ کے کارکنوں اور پبلک ٹرانسپورٹ اور خوراک کی تقسیم کے پروگراموں کے لیے فراہم کی جائے گی۔ وزیر توانائی کنچنا وجیسیکرا نے نامہ نگاروں کو بتایا’فنڈز اکٹھا کرنا چیلنجنگ ہے۔ یہ ایک بہت بڑا چیلنج ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت نے ایندھن کے نئے ‘اسٹاک’ کا آرڈر دیا ہے اور 40,000 میٹرک ٹن ڈیزل لے کر ایک طیارہ جمعہ کو ملک میں پہنچنے کی توقع ہے، جبکہ دوسرا طیارہ 22 جولائی کوپٹرول لے کر جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ ایندھن کی کئی کھیپیں آنے والی ہیں، لیکن حکام اس کی ادائیگی کے لیے 587 ملین ڈالر اکٹھا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔وجیسیکرا نے کہا کہ سری لنکا پر سات ایندھن فراہم کرنے والوں کا تقریبا 800 ملین ڈالر کا مقروض ہے۔ گزشتہ ماہ ملک بھر کے سکول ایندھن کی قلت کے باعث ایک دن کے لیے بند کردیئے گئے تھے اور شہری علاقوں میں سکول گزشتہ دو ہفتوں سے بند ہیں۔ اب سکول جمعہ تک بند رہیں گے۔ حکام نے پیر سے ملک بھر میں تین گھنٹے کی بجلی بند کرنے کا بھی اعلان کیا ہے کیونکہ وہ بجلی پیدا کرنے والے پلانٹس کو کافی ایندھن فراہم نہیں کر پا رہے ہیں۔