Tight-lipped Taliban leaders gather after U.S. says Zawahiri killed

کابل: (اے یوایس)کابل میں امریکی ڈرون حملے میں القاعدہ رہنما ایمن الظواہری کی ہلاکت کے بعد طالبان رہنما سر جوڑ کر بیٹھ گئے ہیں کہ امریکہ کو اس کا جواب کیسے دیا جائے۔خیال رہے اتوار کو کابل پر ڈرون حملے کے بعد امریکی حکام کی جانب سے بتایا گیا تھا کہ القاعدہ رہنما ایمن الظواہری کو اس وقت نشانہ بنایا گیا جب وہ اپنی رہائش گاہ کی بالکونی میں کھڑاتھا۔اس واقعے کو ایک دہائی قبل القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن کی پاکستان کے شہر ایبٹ آباد میں ہلاکت کے بعد طالبان جنگجوؤں کے لیے اہم دھچکا اور امریکہ کی اہم کامیابی کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔رپورٹ کے مطابق ایک سینیئر امریکی اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ امریکہ افغانستان میں القاعدہ کے مزید ارکان کو نشانہ بنانے کا سلسلہ جاری رکھے گا اور یقینی بنایا جائے گا امریکہ پر دہشت گرد حملوں کے لیے اس ملک کو پھر سے استعمال نہ کیا جا سکے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ہم ہوشیار رہیں گے اور جہاں ضروری ہو گا کارروائی کریں گے، جیسا کہ ہم نے رواں ہفتے کیا ہے۔انہوں نے یہ وضاحت بھی کی کہ امریکی صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ اب بھی طالبان کے ساتھ مذاکرات کرے گی تاہم صرف اسی صورت میں جب ان سے امریکی مفادات کو تقویت ملے گی۔دوسری جانب اسلامک گروپ کے ارکان جو سالہا سال سے القاعدہ کے اتحادی ہیں کی جانب سے اتوار کو ڈرون حملے کی تصدیق کی گئی تھی تاہم ساتھ یہ بھی کہا گیا تھا کہ وہ گھر خالی تھا۔طالبان کے ایک اہم عہدیدار نے بتایا کہ حکام کے اعلٰی سطحی اجلاس ہوئے ہیں جن میں مشاورت کی گئی کہ آیا امریکہ کو حملے کا جواب دینا چاہیے، اور اگر طے پاتا ہے، تو اس کا طریقہ کار کیا ہو گا۔‘طالبان رکن کی جانب سے یہ بھی بتایا گیا ’دو روز تک حکام کے درمیان طویل مشاورت ہوئی۔‘طالبان رکن نے اس امر کی تصدیق نہیں کی کہ جس گھر کو ڈرون حملے کا نشانہ بنایا گیا اس میں ایمن الظواہری موجود تھا۔

ایک سال قبل امریکی حمایت یافتہ حکومت کو شکست دے کر اقتدار میں آنے والے گروپ کا حملے پر ردعمل اہم اثرات مرتب کر سکتا ہے کیونکہ دوسری جانب یہ اربوں ڈالر کے منجمد فنڈز تک رسائی حاصل کرنے کا بھی خواہاں ہے۔فنڈز کی بحالی کے حوالے سے امریکی عہدیدار کا کہنا تھا کہ امریکہ طالبان پر دبا¶ ڈالتا رہے گا کہ وہ لڑکیوں کی تعلیم پر سے پابندی اٹھائیں اور ایسے اقدامات کریں جن سے معیشت بہتر ہو۔ان کا اشارہ افغان مرکزی بینک کی طرف تھا۔اہلکار کے مطابق واشنگٹن انسانی بنیادوں پر امداد جاری رکھے گا اور طالبان پر زور دیتا رہے گا کہ وہ 2020 میں اغوا کیے گئے مارک فریچس نامی امریکی شہری کو رہا کریں۔ دولت اسلامیہ فی العراق و الشام (داعش) کی علاقائی برانچ کو ختم کریں اور دوسرے دہشت گرد گروہوں کو روکیں۔خیال رہے مصر سے تعلق رکھنے والاڈاکٹر ایمن الظواہری 11 ستمبر 2001 کو امریکہ میں ہونے والے حملوں میں ملوث تھا اور دنیا کے مطلوب ترین افراد میں شامل تھا۔