How US spies found al-Qaeda's top man in Kabul

القاعدہ کے سربراہ ایمن الظواہری اس اتوار کی صبح بیدار ہوئے تو انہیں اندازہ نہیں تھا کہ کابل کی یہ خوبصورت صبح ان کی زندگی کا آخری دن ہے۔ وہ یہ بھی نہیں جانتا تھا کہ جس گھر کو وہ اپنے اور اپنے اہل خانہ کے لیے انتہائی محفوظ سمجھتے ہیں اس کے باہر کھڑے طالبان فوجی مہینوں سے ان کے روزمرہ کے معمولات کی مکمل رپورٹس امریکہ اور برطانیہ کو بھیج رہے تھے۔ اس کے یہاں روپوش ہونے کی اطلاعات وائٹ ہاو¿س میں صدر جو بائیڈن کی میز پر کئی ہفتوں سے پڑی تھیں۔ ظواہری کا ٹھکانہ پورے کیمرہ فوکس میں تھا اور جب سے مغربی انٹیلی جنس ایجنسی میں بھرتی ہونے والے ایک ذریعے نے اسے کابل کے اس گھر کی بالکونی میں دیکھا تھا اسے نہ صرف واشنگٹن بلکہ نارتھ یارکشائر کے ہیروگیٹ میں انٹیلی جنس نگرانی کے مراکز میں بھی دیکھا جا رہا تھا ۔اتوار کی صبح ایک امریکی ریپر ڈرون 10,000 فٹ سے زیادہ کی بلندی پر کابل کے اس گھر پر بغیر کسی کی نظر میں آئے چکر کاٹ رہا تھا جس میں الظواہری قیام پذیر تھے۔ اس ڈرون سے 45۔45 کلوگرام کے دو آر9 ایکس ہیل فائر میزائل داغے گئے جو 1600 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے آگے بڑھے۔ ان میں کوئی دھماکہ خیز مواد نہیں تھا، صرف 6-6 بلیڈ لگے تھے۔ اس سے پہلے کہ ظواہری کوئی آواز سن پاتے، وہ ڈرون کی زدمیں آکر ہلاک ہو چکے تھے۔

طالبان کے ایک سینیئر اہلکار کے مطابق درحقیقت الظواہری نے طویل عرصے تک افغانستان کو کبھی نہیں چھوڑا تھا۔ ستمبر 2001 میں جب امریکی فوج اتحادیوں کے ساتھ مل کر افغانستان میں آپریشن کر رہی تھی تو تب بھی و ہ وہاںسے بھا گے نہیں تھے بلکہ افغانستان کے جنوبی صوبے ہلمند میں موسیٰ قلعہ کے ناقابل رسائی پہاڑوں میں کہیں روپوش تھے۔ وہ اس قدر لو پروفائل کے طور پر رہتے تھے کہ کئی بار سرحد عبور کر کے پاکستان گئے لیکن کسٹم افسران کو کبھی یقین نہیں ہوا کہ وہ جواہری ہے۔وائٹ ہاو¿س کے کرائسز کمانڈ سینٹر کے سیچویشن روم میں ایک خصوصی ملاقات ہوئی۔ بائیڈن ابھی یورپ کے پانچ روزہ دورے سے واپس آئے تھے۔ انہیں بتایا گیا کہ الظواہری پر کیسے حملہ کیا جائے۔ اس ملاقات میں سلامتی کے مشیر اور سی آئی اے۔ ڈائریکٹر ولیم برنز بھی موجود تھے جنہوں نے بائیڈن کو پورے گھر کا ماڈل دکھایا اور کہا کہ اس مقام پر ظواہری کو نشانہ بنایا جا سکتا ہے۔کوویڈ-19 کی وجہ سے کوارنٹائن میںبائیڈن نے بالآخر اپنے گھر سے ہی الظواہری پر اسٹرئیک کی منظوری دے دی۔آپریشن کے لیے تمام تیاریاں مکمل کر لی گئی تھیں۔ اس آپریشن کے آخری مرحلے کی نگرانی امریکہ اور انگلینڈ دونوں سے کی جا رہی تھی۔ اس کے علاوہ امریکی اور برطانیہ کی انٹیلی جنس نے نارتھ یارکشائر میں ہیروگیٹ اور آر اے ایس . ہل سے نگرانی کر رہا تھا۔

سیٹلائٹ الظواہری کے گھر کو براہ راست نشر کر رہا تھا۔ اب بس کابل میں صبح ہونے کا انتظار تھا۔اس سال اپریل کے اوائل میں امریکی قومی سلامتی کے مشیر جیک سلیوان نے صدر بائیڈن کو پہلی بار بتایا کہ برسوں کی تلاش کے بعد امریکی انٹیلی جنس ایجنسیوں کو بالآخر الظواہری کا ٹھکانہ مل گیا۔برطانیہ کے انٹیلی جنس ذرائع کے مطابق الظواہری کا خاندان رواں سال اپریل میں ہی ہلمند سے کابل آیا تھا۔ ظواہری نے چار شادیاں کیں جن سے 7 بچے پیدا ہوئے۔ ان میں سے کم از کم چار بچے اس کی پہلی بیوی اجہ کے ساتھ ایک حملے میں مارے گئے۔ اب وہ صرف ایک بیوی اور بیٹی کے ساتھ رہ رہا تھا۔سی آئی اے اس نے لادن کے ایبٹ آباد ٹھکانے کا سراغ اس کے میسنجر کی پیروی کرتے ہوئے لگایا تھا۔ اسی طرح ظواہری کے ٹھکانے کے بارے میں بھی میسنجر کی پیروی کرتے ہوئے معلومات حاصل کی گئیں۔ کابل کے پوش علاقے شیرپور میں بنائے گئے اس گھر کی چہار دیواری بہت اونچی تھی۔برطانیہ نے اس گھر کی سیکیورٹی پر تعینات طالبان کے بھرتی کیے گئے ایک جنگجو کو اپنا جاسوس بنایا تھا۔

انہوں نے متعدد ذرائع سے ظواہری کی موجودگی کی تصدیق کی۔ ان میں ظواہری کے نام سے میل، تصاویر اور دیگر معلومات شامل تھیں۔طالبان میں ایک برطانوی جاسوس کی جانب سے الظواہری کی وہاں موجودگی کی تصدیق کے بعد امریکی اور برطانیہ کی خفیہ ایجنسیوں نے مشترکہ نگرانی کی کارروائی شروع کی اور حقانی نیٹ ورک کی تمام املاک کی نگرانی شروع کر دی۔ اس سے ظواہری کے مقام کی دوبارہ تصدیق ہوگئی۔ظواہری کے ٹھکانے کی تصدیق ہونے کے بعد گھر کے اندر موجود اس کی معلومات کی تفصیلات جمع کرنے کا کام شروع کر دیا گیا۔ اس کے معمولات کی تفصیلات تیار کی گئیں۔ معلوم ہوا کہ صبح اٹھنے کے بعد ظواہری مقررہ وقت پر بالکونی میں آتے ہیں اور کچھ دیر کھڑے ہو کر ادھر ادھر دیکھتے ہیں۔