Pakistan to buy anesthesia from India to overcome acute shortage

اسلام آباد: حکومت پاکستان نے ملک میں ادویات کی قلت پر قابو پانے کے لیے ہندوستان سے بیہوشی کی دوا سمیت دیگر ادویات درآمد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ سکون آور کیمیکلز کی قلت کے باعث لاہور، خیبر پختونخواہ اور سنگھ صوبہ سمہتا کے کئی ہسپتالوں میں سرجری نہیں کی جارہی۔ پیداواری لاگت میں اضافے کی وجہ سے یہ ادویات مارکیٹ میں دستیاب نہیں ہیں۔ حکومت پاکستان نے مقامی دوا ساز کمپنیوں کو ہندوستان اور امریکہ سے ادویات خریدنے کی اجازت دے دی ہے۔

وزارت صحت کے ترجمان نے کہا کہ چین پہلے ہی پڑوسی ممالک جیسے ایران، سری لنکا اور ہندوستان سے بہت سی ادویات درآمد کر رہا ہے۔ وزیر اعظم شہباز شریف کی زیر صدارت کابینہ کے آئندہ اجلاس میں ہندوستان سے دوا درآمد کرنے کی تجویز پیش کر دی گئی ہے۔

پاکستان فارماسیوٹیکل مینوفیکچررز ایسوسی ایشن کے ایک سینئر رکن نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ بجلی اور خام مال کے نرخ بڑھ گئے ہیں اور اوپر سے روپیہ بھی ڈالر کے مقابلے گرتا جارہا ہے ۔پہلے خام مال کے ایک کنٹینر کی قیمت 1200 ڈالر یعنی 95 ہزار روپے تھی جو اب بڑھ کر 12000 ڈالر یعنی 9 لاکھ 50 ہزار روپے ہو گئی ہے۔ سینیٹ کمیٹی کے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ پاکستان ہندوستان سے ہر سال تقریباً 150 مزید ویکسین اور ادویات درآمد کرتا ہے۔