German president apologizes for 1972 Olympic attack failures

برلن:(اے یوایس ) جرمنی نے 1972 میں ہونے والے میونخ اولمپکس حملے میں ہلاک ہونے والوں کے خاندانوں سے معافی مانگی، اور اس ناکامی کی ذمہ داری قبول کی ، جس کی وجہ سے 11 اسرائیلی ہلاک ہو گئے تھے۔جرمنی کی جانب سے صدر فرینک والٹر اسٹین میئر کی طرف سے مقتول کھلاڑیوں کے خاندانوں کے ساتھ زر تلافی پر پچاس سال پر محیط تلخ اور طویل لڑائی کے بعد سامنے آئی ہے۔ جرمنی اور متاثرہ خاندانوں کے درمیان زرتلاقی پر اتفاق بھی ہو گیا ہے اور جرمنی اتھیلیٹس کے لیے سکیورٹی میں رہ جانے والی خامیوں کو بھی تسلیم کر رہا ہے۔سٹین میئر نے اس ہوائی اڈے پر جہاں یہ حملہ ہوا تھا ، ایک پروقار تقریب میں کہا جو کچھ ہوا ہم اس کی تلافی نہیں کر سکتے، یہاں تک کہ آپ کو دفاعی، لاعلمی اور ناانصافی کے حوالے سے جس چیز کا بھی سامنا کرنا پڑا اور جھیلنا پڑا، میں اس پر شرمندہ ہوں ۔ اس ملک کے سربراہ کی حیثیت سے اور وفاقی جمہوریہ جرمنی کے نام پر، میں آپ سے میونخ میں اولمپک گیمز کے وقت اسرائیلی کھلاڑیوں کے تحفظ میں کمی اور اس کے بعد وضاحت نہ کرنے کے لیے آپ سے معافی مانگتا ہوں۔

اسرائیل کے صدر اسحاق ہرزوگ نے تقریر کے لئے اسٹین میئر کی تعریف کی جسے انہوں نے جرات مندانہ ‘اور تاریخی تقریر قرار دیا۔اسرائیل کے صدر جرمنی کے سرکاری دورے پر ہیں۔انہوں نے کہا کہ یہ اقدام نصف صدی بعد، متاثرین، خاندانوں اور خود تاریخ کے لیے اخلاقیات اور انصاف کے ایک اہم قدم کی نمائندگی کرتا ہے۔ 5 ستمبر 1972 کو فلسطینی عسکریت پسند گروپ بلیک ستمبر کے آٹھ مسلح ارکان نے اولمپک ویلیج میں اسرائیلی ٹیم کے فلیٹ میں گھس کر دو افراد کو گولی مار کر ہلاک کر دیا اور نو اسرائیلیوں کو یرغمال بنا لیا۔مغربی جرمنی کی پولیس نے ایک بڑے ریسکیو آپریشن کے ساتھ کاروائی کی جس میں 8اغوا کندگان میں سے5 ، ایک پولیس افسر اور یرغمال بنائے جانے والے تمام9 کھلاڑی مارے گئے۔اس اندوہناک واقعے کے باوجود، بین الاقوامی اولمپک کمیٹی نے 6 ستمبر کی صبح اعلان کیا کہ کھیل جاری رہیں گے۔

جرمنی کے صدر سٹین مئیر نے پورے واقعہ کا خلاصہ تین ناکامیوں کے طور پر کیا، ، پہلی، گیمز کی تیاری اور اس کے حفاظت کے نظریہ میں ناکامی ؛ 5 اور 6 ستمبر کے واقعات ؛ اور تیسری ناکامی جو “قتل کے اگلے دن شروع ہوئی۔ خاموشی، دبادینا اور فراموش کر دینا۔انہوں نے کہا کہ کئی دہائیوں تک، متاثرین کی تکلیف کو نظر انداز کیا جاتا رہا، انہوں نے اسے سنگ دلی کے برس قرار دیا۔ان کھیلوں کا مقصد ہولوکاسٹ کے 27 سال بعد ایک نئے جرمنی کو دنیا کے سامنے پیش کرنا تھا، لیکن اس کے بجائے، اس سانحے سے اسرائیل اور جرمنی کے درمیان دوری اگئی،تاویزات جاری کیں، جن میں خصوصی طور پر غیر اعلانیہ مواد بھی شامل تھا، جس میں جرمن سیکیورٹی سروسز کی کارکردگی پر تنقید کی۔رپورٹس میں اسرائیل کے سابق انٹیلی جنس سربراہ زیوی ضمیر کا ایک سرکاری بیان بھی شامل ہے۔جس میں کہا گیا کہ جرمن پولیس نے انسانی جانوں کو بچانے کے لیے معمولی سی کوشش بھی نہیں کی ۔