Death toll in Uttar Pradesh from rain-related incidents rises to 34

لکھنؤ:(اے یو ایس)یوپی کے 32 اضلاع میں بارش سے متعلقہ حادثات میں کم از کم34افراد ہلاک ہو گئے۔ محکمہ موسمایت کے مطابق 24 گھنٹوں میں ریاست میں اندازاً 428 فیصد زیادہ بارش ہوئی ہے۔ محکمہ موسمیات نے اندازہ لگایا تھا کہ اوسطاً 6.1 ملی میٹر بارش ہوگی۔ جبکہ یہ 32.2 ملی میٹر تھا۔ یہ تخمینہ سے 428 فیصد زیادہ ہے۔اس کے علاوہ بارش سے متعلقہ حادثات میں 48 گھنٹوں میں 34 افراد ہلاک ہوئے۔ جمعہ کو تیز ہواؤں کے ساتھ موسلا دھار بارش نے لکھنؤ سمیت کئی شہروں میں زبردست تباہی مچا دی ہے۔ درخت اور تاریں ٹوٹنے سے کئی مقامات پر بجلی کا نظام درہم برہم ہوگیا ۔

دارالحکومت لکھنؤ میں چھاؤنی تھانے کے تحت علاقہ دل کشا میں ایک زیر تعمیر دیوار گرنے سے9افراد اور اندرا نگر(غازی پور) میں کرنٹ لگنے سے ا یک شخص سمیت10افراد ہلاک ہو گئے۔ یہاں بارشوں نے گزشتہ 10 سال کا ریکارڈ توڑ دیا۔ لکھنؤ میں 24 گھنٹوں میں 160 ملی میٹر بارش ہوئی ہے۔ گزشتہ 10 سالوں میں اتنی بارش کبھی نہیں ہوئی۔ 2012 میں 14 ستمبر کو 138 ملی میٹر بارش کا ریکارڈ تھا۔ اس سے پہلے 14 ستمبر 1985 کو سب سے زیادہ بارش کا ریکارڈ 177.1 ملی میٹر تھا۔لکھنو¿، کانپور، جھانسی جیسے شہروں میں اگرچہ بارش رک گئی ہے۔ تاہم موسم ابر آلود ہے۔

لکھنؤ میں نشیبی علاقوں میں اب بھی پانی جمع ہے۔محکمہ موسمیات نے ریاست کے 32 اضلاع میں بارش کا الرٹ جاری کیا ہے۔ ان اضلاع میں لکھیم پور کھیری، سیتا پور، بجنور، میرٹھ، مرادآباد، بدایوں، رامپور، فرخ آباد، شاہجہاں پور، ہردوئی، پیلی بھیت، بہرائچ، بارہ بنکی، گونڈہ، سدھارتھ نگر، بستی، سنت کبیر نگر، کشی نگر، مہراج گنج، کانپور، اناؤ، بارہ بنکی ہیں۔ امیٹھی، پرتاپ گڑھ، جونپور، سلطان پور، ایودھیا، امبیڈکر نگر، اعظم گڑھ، گورکھپور، مؤ، چندولی، وارانسی ہیں۔طوفانی باروں کے پیش نظر وزیر اعلیٰ یوگی ادتیہ ناتھ نے تمام متاثرہ اضلاع میں متعلقہ افسران کو امدادی کاموں کی نگرانی کرتے رہنے اور متاثرین کو مالی امداد کی فراہمی یقینی بنانے کی ہدایت کی۔