Not easy to deal flood disasters by any institution on its own : says Ahsan Iqbal

اسلام آباد:(اے یوایس ) وفاقی وزیرمنصوبہ بندی احسن اقبال کا کہنا ہے کہ فوج سمیت پاکستان کے تمام ادارے اپنی صلاحیت سے بڑھ کر متاثرین کی امدادی سرگرمیوں میں مصروف ہیں لیکن حالیہ سیلاب سے جتنے بڑے پیمانے پر تباہی ہوئی ہے کہ اس سے نمٹنا کسی ایک ادارے کے بس کی بات نہیں۔وفاقی وزیرمنصوبہ بندی احسن اقبال نے چیئرمین این ڈی ایم اے لیفٹیننٹ جنرل اختر نواز، کوآرڈینیٹر این ایف ار سی سی میجر جنرل ظفر کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یہ مصیبت جتنی بھی بڑی ہے پاکستانی قوم کی صلاحیت سے زیادہ بڑی نہیں۔

انھوں نے دو تہائی خشک پاکستان سے اپیل کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ لوگ جو سیلاب سے محفوظ رہ گئے ہیں، جن کے کاروبار معمول کے مطابق چل رہے ہیں اور جن کی فصلیں لہلہارہی ہیں، میں ان سے اپیل کرتا ہوں کہ جن لوگوں کا سب کچھ سیلاب میں تباہ و برباد ہو گیا ہے، ان کی مدد کریں۔ان کا کہنا تھا کہ جب تک ہمارا آخری ہم وطن پاکستانی اپنے گھر میں بس نہیں جاتا، ہم پر قرض ہے کہ ہم ان کی جتنی مدد کر سکیں، کریں۔انھوں نے علمائے کرام سے بھی اپیل کی کہ اپنے خطبوں میں سیلاب سے متاثرہ افراد کی مدد پر زور دیں۔

احسن اقبال کا کہنا تھا کہ یہ مصیبت جتنی بڑی ہے وسائل اتنے ہی کم ہیں، سب کو مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے۔انھوں نے تجویز دی کہ 25 لاکھ طلبا اورطالبات کو ٹاسک دیا جائے کہ وہ متاثرین کے لیے خود عطیات دیں یا جمع کریں، طلبا اورطالبات مدر اینڈ چائلڈ بنیادی ضروریات پیک بنائیں اور متاثرین میں تقسیم کریں۔ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کو ماحولیاتی تبدیلی کے سب سے زیادہ نقصانات کا سامنا ہے اور ہماری کوشش ہے کہ جلد از جلد لوگوں کی زندگی بحال کر سکیں۔