Twelve killed in rain related incidents and lightning

لکھنؤ: (اے یوایس )ملک کی کئی ریاستوں میں شدید بارشوں سے تباہی جاری ہے۔ اترپردیش میں موسلا دھار بارش کی وجہ سے مکان گرنے اور آسمانی بجلی گرنے کے واقعات میں 12 افراد کی موت ہو گئی۔ اس کے علاوہ 11 افراد زخمی ہوئے۔ فیروز آباد میں بارش کی وجہ سے صورتحال انتہائی خراب ہے۔ اس کے ساتھ ہی علی گڑھ میں اسکولوں کو بند کرنا پڑا ہے ۔

یوپی کے اٹاوہ میں 7، دیوریا میں 3، بلرام پور اور بلند شہر میں 1-1 لوگوں کی موت مکان گرنے سے ہوئی ہے۔ بارش کی وجہ سے ریاست کے 10 اضلاع کے تمام سرکاری اور نجی اسکول آج بند رہیں گے۔ یہ حکم محکمہ موسمیات کی جانب سے شدید بارش کی وارننگ کے بعد جاری کیا گیا ہے۔ محکمہ موسمیات نے ‘یلو الرٹ’ جاری کرتے ہوئے بعض مقامات پر شدید بارش کے حوالے سے وارننگ جاری کی ہے۔

محکمہ نے لوگوں سے الرٹ رہنے کی اپیل کی ہے۔اس کے ساتھ ہی ہاپوڑ کے لال پور گاؤں میں طوفانی طوفان سے 30 سے زائد درخت جڑوں سے اکھڑ گئے اور سینکڑوں بیگھے گنے، گوبھی اور چارے کی فصلیں تباہ ہو گئیں۔ اسی دوران بجلی کی لائنیں اور ٹرانسفارمر بھی گر گئے۔ اس کے ساتھ گاؤں کے مندر کی عمارت کو بھی نقصان پہنچا ہے۔

موسلادھار بارش نے ایک بار پھر کسانوں کی خواہشات پر پانی پھیر دیا ہے۔ یوپی میں موسلا دھار بارش سے کسانوں کی سینکڑوں ہیکٹر پر کھڑی فصلیں برباد ہو گئی ہیں۔موسلا دھار بارش کی وجہ سے اٹاوہ میں اسکول تین دن سے بند ہیں۔ اس وقت علی گڑھ، فیروز آباد، اٹاوہ، کاس گنج، آگرہ سے بھی ایسی ہی اطلاعات ہیں۔ تینوں اضلاع میں موسلادھار بارش کی وجہ سے اسکول بند کردیئے گئے ہیں۔