Why India's success matters to the world and not just to Indians

ہم جس عالمگیریت کے دور میں رہتے ہیں اس کے بارے میں اکثر کہا جاتا ہے کہ دنیا کے کسی بھی حصے میں رونما ہونے والا واقعہ جغرافیائی فاصلے سے قطع نظر بہت سے خطوں کو ممکنہ طور پر متاثر کرسکتا ہے۔یہ اوور لیپنگ اور باہمی جڑے ہوئے عالمی ویلیو چینز کا دور ہے، جہاں کامیابی یا ناکامی ضروری نہیں کہ قومی حدود تک محدود ہو۔ ایسے عالمی منظر نامے میں ہندوستان جیسے ملک کی کامیابی نہ صرف اس کے اپنے ترقی کے عزائم کے لئے اہم ہے۔ بلکہ اس نے اپنے مقررہ اہداف کوحاصل کر نے اور چیلنجوں پر قابو پانے کے لئے مثبت اثرات سے کہیں زیادہ ہوں گے۔یہ عالمی رجحانات کو تشکیل دینے کی طاقت کے ساتھ فیصلہ کن قوت ہوگی۔ ہندوستان میں کچھ خصوصیات ہیں جو اس کی کامیابی کو خاص طور پرعالمی منظر نامے کیلئے اہم بناتی ہیں۔دنیا کی مجموعی آبادی چھٹے حصے کے مالک ہندوستان کے انسانی وسائل کے وسیع تالاب کا اکثر پالیسی مباحثوں میں ذکر کیا جاتا ہے۔

یہ بڑے پیمانے پر مانا جاتا ہے کہ ان وسائل کی صلاحیت کو بروئے کار لاتے ہوئے ہندوستان اور دنیا دونوں کو بڑے پیمانے پر فائدہ حاصل کرنا ہے ۔ ہندوستان میں 2020 اور 2050 کے درمیان 15.64سال کے کام کاجی عمر میں ایک طرف 183 ملین لوگوں کو جوڑنے کی امید ہے۔ اس کے علاوہ ہندوستان کی کام کاجی عمر کی آبادی 2027تک عالمی لیبر فورس کے 18.6 فیصد تک بڑھنے کی امید ہے۔ اس کے علاوہ لیبر فورس مختلف صنعتوں کو پورا کرنے کے لئے ممکنہ مانگ کو پورا کرے گا۔ آبادی کو فعال بنانا اب تک غیر استعمال شدہ مطالبہ قوتوں کو آزاد کرتا ہے۔ورلڈ اکنامک فورم کے مطابق 2030 تک ہندوستان کی قیادت متوسط طبقے کے ہاتھوں میں ہونے کا تخمینہ ہے۔ 2030 میں تقریباً 80فیصد پریوار درمیانی آمدنی والے ہوں گے۔جو آج تقریباً 50 فیصد سے زیادہ ہے ، متوسط طبقے کے 2030 میں کنزیومر خرچ کا 75 فیصد چلانے کی امید ہے۔

یہ کھنڈ تیزی سے مانگ پیدا کرسکتا ہے ہندوستان کے کھپت کے اخراجات کو بڑھا سکتا ہے اور خدمات فراہم کر سکتا ہے ۔ اگر ہندوستان اپنا ڈیموگرافک فائدہ اٹھانے میں کامیاب ہو جاتا ہے تو اس وسعت پذیر متوسط طبقے کی کھپت میں اضافے کو تقریباً 14 کروڑ نئے شراکت داروں کے ساتھ کنزیومر اضافے کو بہتر تعلیم یافتہ اور ملازمت پیشہ نوجوانوں کے ذریعے متعارف کیاجائے گا۔ دنیا بھر کی صنعتوں کے پاس اس بازار کی بہتر سیوا کرنے اور ملک کے نوجوان اور قابل لوگوں کا استحصال کرنے کا موقع ہو گا۔حالیہ سالوں میں ہندوستان عالمی معیشت میں اہم مقام پر آگیا ہے۔ حال ہی میں ہندوستان برطانیہ کو پیچھے چھوڑ کر دنیا کی پانچویں سب سے بڑی معیشت بن گئی ہے۔

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ کے تخمینوں کے مطابق ہندوستان 2021میں شکل میں بڑی چنوتیوں کا سامنا کرنے کے باوجود عالمی ترقی میں تقریباً 15 فیصد حصہ ہے۔ اس کے علاوہ ایک بار جب ہندوستان مختلف طبقات، برادریوں اور خطوں میں ملک کے اندر خوشحالی کا زیادہ مساوی پھیلاو¿ حاصل کر لیتا ہے، تو یہ عالمی ترقی کے امکانات کے بارے میں سوچنے پر زور دیتا ہے۔ ہندوستان جن رکاوٹوں کا سامنا کر رہا ہے ان پر قابو پانے سے وہ اپنی حقیقی صلاحیت کو پورا کرپائے گا اور ملک کو عالمی ترقی میں زیادہ سے زیادہ صلاحیتوں میں حصہ ڈالنے میں مدد ملے گی۔ ہندوستان نے 2021-22 میں 83.57 بلین ڈالر کی اپنی بلند ترین سالانہ غیر ملکی براہ راست سرمایہ کاری تک پہنچ کر اس حقیقت کو قائم کیا ہے کہ یہ تیزی سے ایک پسندیدہ سرمایہ کاری کی منزل کے طور پر ابھر رہا ہے۔