Police untangle mystery of Quetta tripple murder

کوئٹہ : یہاںکی پولس نے یہاں ہوئے تہرے قتل کا معمہ اس وقت حل کر لیا جب گرفتار شخص نے جو مقتولین کا سگا بھائی تھا ، اپنے ان تینوں بھائیوں کو گولی مار کر ہلاک کرنے کا اعتراف کر لیا ۔ ۔کوئٹہ کے نواحی علاقے ریلوے ہاو¿سنگ سوسائٹی میں 3 بھائیوں کے قتل کا یہ واقعہ اس وقت پیش آیا جب مقتولین شادی کی تقریب میں شرکت کے بعد واپس گھر جارہے تھے۔ایک سینئر پولیس افسر نے بتایا کہ واقعے کی اطلاع ملنے پر پولیس جائے وقوع پر پہنچی جہاں تینوں بھائیوں کی لاش کے علاوہ چوتھا بھائی قیس خان اچکزئی اور ملازم اسفند بھی پائے گئے، بعد ازاں تینوں مقتولین کی لاشوں کو سول ہسپتال منتقل کردیا گیا۔

پولیس نے بتایا کہ چوتھے بھائی اور ملازم کو پوچھ گچھ کے لیے تھانے لے جایا گیا کیونکہ وہ بھی واقعہ کے وقت کار میں موجود تھے۔ابتدائی تفتیش سے معلوم ہوا کہ قیس خان نے مقتولین پر اس وقت فائرنگ کی جب وہ گھر کے نزدیک پہنچے، اس دوران ملازم اسفند بھی زخمی ہوا۔ایک سینئر پولیس افسر نے بتایا کہ قیس خان نے اپنے بھائیوں پر فائرنگ کرنے کا اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ اس کے اپنے بھائیوں کے ساتھ اچھے تعلقات نہیں تھے کیونکہ وہ اس کے بارے میں توہین آمیز تبصرے کرتے تھے۔

پولیس نے مزید کہا کہ ملزم اپنے بھائیوں کو قتل کرکے جائیداد میں بڑا حصہ حاصل کرنے کی توقع کر رہا تھا۔پولیس کے مطابق ملزم نے بتایا کہ وہ اپنے بھائیوں کے ساتھ شادی میں جاتے وقت اپنے کزن کی پستول ساتھ لے گیا اور گھر واپس آتے ہوئے اس نے اپنے تینوں بھائیوں کو گولی مار کر قتل کردیا۔پولیس نے بتایا کہ ملزم نے گھر کے ملازم کو دھمکی دی کہ اگر اس نے اس حوالے سے کسی کو کچھ بتایا تو وہ اسے بھی جان سے مار دے گا۔ایک سینئر پولیس افسر نے کہا کہہ ہم نے ملزم سے تینوں بھائیوں کو قتل کرنے کے لیے استعمال کیا گیا پستول بھی برآمد کر لیا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ کرائم انویسٹی گیشن ایجنسی واقعے کی تحقیقات کر رہی ہے اورکار سے شواہد بھی اکٹھے کرلیے ہیں۔