Russian troops forced out of eastern town Lyman

قیف: روس نے جنگی نوعیت سے اہم یوکرینی شہر لائمان سے اپنی فوجیں واپس بلالیں۔ روس کے اس اقدام کو مشرقی یوکرین میں روسی کارروائی میں زبردست دھچکا قرار دیا جا رہا ہے۔روس کی وزارت دفاع نے ایک بیان جاری کر کے کہاکہ یہ پسپائی اس لیے اختیار کی گئی کیونکہ شہر میں ہزاروں فوجیوں کے محصور ہوجانے کا خدشہ تھا۔ لائمان پر دوبارہ قبضہ کرلینے سے یوکرینی فوجی ڈونیٹسک اور لوہانسک خطوں میں مزید متنازعہ علاقوں تک پہنچ سکتے ہیں۔

یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلینکی نے اتوار کے روز کہا کہ قصبے کو روسی فوجیوں سے مکمل طور پر چھڑا لیا گیا ہے۔ روسی پسپائی کے اعلان سے پہلے ہفتے کے روز آن لائن جاری کی گئی ویڈیو فوٹیج میں یوکرین کے فوجیوں کو قصبے کے مضافات میں اپنا قومی پرچم لہراتے ہوئے دکھایا گیا۔ چونکہ روس دونیستک کے شمال میں اپنی کارروائیوں کے لیے لائمان کو مرکز کے طور پر استعمال کر رہا تھا اس لیے اس پر یوکرین کا دوبارہ قبضہ یوکرینی فوج کے لیے زیادہ اہمیت کا حامل ہو گیا ہے۔روس کی اس شہر سے واپسی کو مشرقی خطہ میں رس کی ایک زبردست شکست سے تعبیر کیا جا رہا ہے۔