Around 96% turnout in Congress presidential polls, results on 19 Oct

نئی دہلی:(اے یو ایس ) کانگریس صدر عہدہ کے الیکشن کیلئے پیر کو ووٹنگ مکمل ہوگئی۔ آل انڈیا کانگریس کمیٹی کے صدر دفتر کے ساتھ ساتھ 65 مقامات پر ووٹنگ مراکز بنائے گئے تھے ، جہاں ڈیلیگیٹس نے ووٹ ڈالے۔ صدر عہدہ کے الیکشن کیلئے ملکا ارجن کھڑگے اور ششی تھرور آمنے سامنے ہیں۔ کانگریس سینٹرل الیکشن اتھاریٹی کے سربراہ مدھوسودن مستری نے پریس کانفرنس کرکے ووٹنگ کی جانکاری دی۔ انہوں نے بتایا کہ کانگریس قومی صدر کیلئے ہوئی ووٹنگ میں آج 9500 نمائندوں نے ووٹنگ کی۔ کل ملاکر 96 فیصد ووٹنگ ریاستوں میں ہوئی۔ اس دوران کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش نہیں آ یا۔ تین بیلٹ باکس موصول ہوئے ہیں۔

ساتھ ہی انہوں نے بتایا کہ 87 لوگوں نے اے ا?ئی سی سی ہیڈکوارٹر میں ووٹ ڈالے۔مدھوسودن مستری نے بتایا کہ کانگریس صدر دفتر میں سونیا گاندھی، منموہن سنگھ سمیت 87 ڈیلیگیٹس نے ووٹ ڈالے۔ ووٹنگ کے بعد سونیا گاندھی نے کہا کہ وہ طویل عرصہ سے اس دن کا انتظار کررہی تھیں۔ سونیا گاندھی ، منموہن سنگھ اور کانگریس جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی نے یہاں صدر دفتر پہنچ کر ووٹ ڈالا۔ وہیں راہل گاندھی نے کرناٹک کے بیلاری میں بھارو جوڑو یاترا کے کنٹینر والے ریسٹ کیمپ میں بنے ووٹنگ سینٹر میں ووٹ ڈالا۔

ان کے ساتھ وہاں تقریبا 40 لیڈروں نے بھی ووٹ کیا، جو ان کے ساتھ اس یاترا میں ہیں۔اس سے پہلے ووٹنگ کے بیچ میں مدھوسون مستری نے مےڈےاسے کہا کہ الیکشن کا پورا عمل آزادانہ، غیر جانبدارانہ اور شفاف رہا ہے اور وہ اس سے مطمئن ہیں۔ ادھر ووٹنگ کے بعد جے رام رمیش نے کہا کہ یہ تاریخی موقع ہے۔ ہمارے یہاں آزادانہ ، غیر جانبدارانہ اور شاف طریقہ سے الیکشن ہوا ہے۔کانگریس پارٹی کی 137 سال کی تاریخ میں چھٹی مرتبہ صدر عہدہ کیلئے الیکشن ہوا ہے۔ پارٹی جنرل سکریٹری جے رام رمیش کے مطابق صدر عہدہ کیلئے اب تک 1939, 1950, 1977, 1997 اور 2000 میں الیکشن ہوئے ہیں۔ پورے 22 سالوں کے بعد صدر عہدہ کیلئے الیکشن ہورہا ہے۔ الیکشن کے نتائج کا اعلان 19 اکتوبر کو کیا جائے گا۔