Raisi blames Biden for inciting "chaos and terror" in Iran

تہران:(اے یو ایس ) ایران کی سرکاری نیوز ایجنسی ارنانے کہا ہے کہ ایرانی صدر ابراہیم رئیسی نے کہا ہے کہ امریکی صدر جو بائیڈن ایران میں افراتفری، دہشت گردی اور تباہی کو ہوا دے رہے ہیں۔ ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان ناصر کنانی نے کہا امریکہ کے صدر نے ر بار مداخلت کرنے والے بیانات کے ذریعے ایران میں بدامنی کی حمایت کی ہے۔ چونکہ ان کے پاس قابل اعتماد مشیر نہیں ہیں اور ان کی یادداشت اچھی نہیں ہے۔ میں بائیڈن کو بتانا چاہتا ہوں کہ ایران اتنا مضبوط اور ثابت قدم ہے کہ وہ آپ کی سخت سزاؤں اور مضحکہ خیز دھمکیوں کے سامنے نہیں جھکا۔

انہوں نے مزید کہا کہ آپ گندے پانیوں میں مچھلیاں پکڑنے کے عادی ہیں، لیکن یاد رکھیں، یہ ایران ہے، جو قابل فخر مردوں اور عورتوں کی سرزمین ہے۔یہ بات قابل ذکر ہے کہ حجاب نہ کرنے پر مہسا امینی کی اخلاقی پولیس کے ہاتھوں گرفتاری اور پھر حراست میں موت کے بغد ایران میں کئی مسائل پر غصے کی آگ بھڑک اٹھی ہے۔ لوگوں کی بڑی تعداد شخصی آزادیوں پر پابندیاں اور خواتین کے لباس سے متعلق سخت قوانین کے خلاف سڑکوں پر نکل آئے ہیں۔

محکمہ خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس نے اتوار کے روز ٹویٹ میں کہا کہ ایران ناحق حراست میں لیے گئے ہمارے شہریوں کی حفاظت کا مکمل ذمہ دار ہے۔ ان قیدیوں کو فوری طور پر رہا کیا جانا چاہیے۔ہفتے کے روز تہران کی ایون جیل میں آگ لگ گئی تھی۔اس سے قبل وزارت خارجہ کے ترجمان بائیڈن کی جانب سے مظاہروں کی حمایت کے اعلان کو ”ریاست کے معاملات میں مداخلت“ قرار دے چکے ہیں۔