Afghanistan: Students complain of lack of teachers, buildings in Kabul

کابل: افغانستان میں طالبان کے اقتدار میں آنے کے بعد لڑکیوں، خواتین اور طالبات کے حقوق پامال کیے جا رہے ہیں۔ کابل کے خاکی جبار ضلع میں طلبا تعلیمی سہولیات اور اساتذہ کی کمی سے پریشان ہو رہے ہیں۔ طلوع نیوز نے رپورٹ کیا کہ طلبا شکایت کر رہے ہیں کہ اس صورتحال نے ان کے لیے تعلیم حاصل کرنا مشکل بنا دیا ہے۔ طلبا کا مزید کہنا تھا کہ آنے والے موسم سرما میں ان کی پڑھائی کے لیے مناسب جگہ کی کمی ہے۔

اساتذہ کا کہنا تھا کہ ابھی تک وزارت تعلیم نے طلبا کی بنیادی ضروریات خصوصا علاقے میں تعلیمی عمارتوں کے مطالبات پر توجہ نہیں دی۔ایک طالب علم حسیب نے کہا کہ ہم ان سے کہتے ہیں کہ وہ ہمارے لیے اسکول کی عمارت بنائیں کیونکہ انہیں بارش کے باوجود کھلے آسمان تلے بیٹھنا پڑتا ہے۔ ایک دوسرے طالب علم محمد نے طلوع نیوز کو بتایا کہ دکان ٹھنڈی تھی، ہم باہر آگئے۔

یہاں زمین گیلی ہے۔ ہمارا مطالبہ ہے کہ وہ ہمارے لیے عمارتیں بنائیں۔ یہاں سردی ہے، ہم پڑھ نہیں سکتے، ہم سب یہاں بیمار ہو جاتے ہیں، ایک اور طالب علم نے طلوع نیوز کو بتایا۔اداروں پر انحصار کرنا مشکل ہے، اگر یہ معاہدہ ختم ہو گیا تو اس سکول کی قسمت کا کوئی مستقبل نہیں باقی بچے گا۔