Philippines and China tussle over retrieving rocket debris

منیلا: پانی کے شعبے میں چین کی غنڈہ گردی مسلسل بڑھ رہی ہے۔ متنازعہ جنوبی بحیرہ چین میں ایک اور تصادم میں، چینی کوسٹ گارڈ نے فلپائنی بحریہ سے ملبہ لے جانے والے راکٹ کو زبردستی قبضے میں لے لیا۔ ملبہ چینی راکٹ لانچ کا معلوم ہوتا ہے۔ فلپائن کے ایک فوجی کمانڈر وائس ایڈمرل البرٹو کارلوس نے بتایا کہ چینی جہاز نے فلپائنی بحریہ کی ایک کشتی کو دو بار روکا، اس سے پہلے کہ ملبے کو اتوار کے روز فلپائن کے زیرِ قبضہ تھیتو ساحل سے لے جایا جا رہا تھا۔ انہوں نے کہا کہ اس واقعے میں کوئی زخمی نہیں ہوا۔یہ چین، فلپائن، ویت نام، ملیشیا، برونئی اور تائیوان پر مشتمل اسٹریٹجک آبی گزرگاہ میں طویل عرصے سے جاری علاقائی تنازعات کا تازہ ترین معاملہ ہے۔

چینی کوسٹ گارڈ کے بحری جہازوں نے اس سے قبل متنازعہ پانیوں میں فلپائنی افواج کو سپلائی لے جانے والی فلپائن کی سپلائی کشتیوں کو روکا تھا، لیکن اس سے بھی زیادہ قابل مذمت عمل دوسرے ملک کی فوج کے قبضے میں موجود اشیا کو ضبط کرنا ہے۔ کارلوس نے کہا کہ تھیتو جزیرے پر فلپائنی میرینز نے طویل فاصلے تک کیمرے کا استعمال کرتے ہوئے دیکھا کہ 800 گز (540 میٹر) دور ایک ٹیلے کے قریب مضبوط لہروں سے ملبہ بہہ جاتا ہے۔وہ ایک جہاز پر سوار ہوئے اور تیرتی ہوئی چیز کو اکٹھا کیا اور اپنے جہاز سے بندھی رسی کا استعمال کرتے ہوئے اسے واپس اپنے جزیرے پر لے جانے لگے۔

کارلوس نے ایک بیان میں کہا کہ جب فلپائنی ملاح اپنے جزیرے کی طرف واپس جا رہے تھے انہوں نے دیکھا کہ چائنا کوسٹ گارڈ کا جہاز نمبر 5203 ان کی طرف آرہا ہے اور بعد میں دو بار ان کا پہلے سے منصوبہ بند راستہ روک دیا۔کارلوس نے کہا کہ پھر چائنا کوسٹ گارڈ کے دستوں نے فلپائنی بحریہ کی طرف سے لے جانے والے مواد کو زبردستی اپنے قبضے میں لے لیا۔ انہوں نے مزید تفصیلات بتائے بغیر کہا کہ فلپائنی میرینز نے پھر جزیرے پر واپس جانے کا فیصلہ کیا۔ فوج کی مغربی کمان کے ترجمان میجر چیرل ٹنڈوگ نے کہا کہ تیرتے ہوئے دھات کے ٹکڑے پانی میں پائے جانے والے چینی راکٹ کے ملبے کے کئی دوسرے ٹکڑوں سے ملتے جلتے دکھائی دیتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ فلپائنی بحریہ نے قبضے کے خلاف کوئی لڑائی نہیں کی۔