Blast hits school in northern Afghanistan, killing at least 19 and wounding 24 others

کابل:صوبہ سمنگان کے ایبک شہر میں بدھ کے روز ایک زبردست بم دھماکے میں کم از کم19افراد ہلاک اور درجنوں دیگر زخمی ہوگئے۔ صوبہ سمنگان کے صوبائی محکمہ اطلاعات و ثقافت کے نائب سربراہ عثمان سیدی کے مطابق یہ دھماکہ شہر کے ایک معروف مدرسہ جہادیہ میں ظہر کی نماز کے دوران ہوا۔

صوبائی محکمہ اطلاعات و ثقافت کے سربراہ فیروز الدین منیب نے دھماکے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ یہ خودکش حملہ نہیں تھا بلکہ بارودی سرنگ بچھا کر کیا گیا تھا اور اس میں مقامی 19 افراد جاں بحق اور 23 دیگر زخمی ہوئے ہیں ۔ انہوں نے مزید کہا کہ ابھی تک کسی نے دھماکے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔ وزارت داخلہ کے ترجمان عبدالنافع ٹکور نے ٹوئٹر کے توسط سے بیان جاری میں اسے اس ناقابل معافی جرم قرار دیتے ہوئے کہا کہ ہمارے سراغ رساں اور سیکیورٹی فورسز حملہ آوروں کی تلاش میں سرگرم ہیں تاکہ انہیں کیفر کردار تک پہنچایا جا سکے۔

دھماکے میں زخمی ہونے وا لے محمدنام کے ایک شخص نے بتایا کہ یہ دھماکہ دوپہر کے تقرباً ایک بجے اس وقت ہوا جب ہم ظہر کی نماز ادا کر رہے تھے،۔ دارالحکومت کابل سے 200 کلومیٹر شمال میں واقع اس شہر کے ایک مقامی ہسپتال کے ڈاکٹر نے بتایا کہ ہلاک شدگان میں زیادہ تر نوجوان لڑکے اور عام شہری تھے۔ یاد رہے کہ گزشتہ سال اگست میں طالبان کے بر سر اقتدار آنے کے بعد سے شہریوں کو نشانہ بنا کررجنوں دھماکے کیے جاچکے ہیں۔ زیادہ تر حملوں کی ذمہ داری انتہا پسند گروپ داعش کی مقامی شاخوںنے قبول کی ہے۔