China likely to have 1500 nuclear warheads by 2035: Pentagon

واشنگٹن: امریکی محکمہ دفاع پینٹاگان نے اپنی ایک رپورٹ میں دعویٰ کیا ہے کہ 2035 تک چین کے پاس 1500 کے قریب ہتھیاروں کے ذخیرے ہونے کا امکان ہے۔ اس میں اس وقت 400 آرڈیننس اسٹورز ہیں۔ پینٹاگون نے یہ اطلاع دی۔ پینٹاگان نے چین کے مہتواکانکشی فوجی پروگرام پر کانگرس کو اپنی سالانہ رپورٹ میں کہا کہ بیجنگ کا مقصد اگلی دہائی میں اپنی جوہری قوتوں کو جدید، متنوع اور توسیع دینا ہے۔انہوں نے کہا کہ چین کی موجودہ جوہری جدید کاری کی مشقیں ماضی کی جدید کاری کی کوششوں کے مقابلے بہت بڑے پیمانے پر ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ چین زمینی، سمندری اور ہوا پر مبنی جوہری پلیٹ فارمز کی تعداد میں اضافہ کر رہا ہے اور اپنی جوہری قوتوں کو بڑھانے کے لیے ضروری انفراسٹرکچر بنا رہا ہے۔پینٹاگون نے کہا کہ اس کا اندازہ ہے کہ چین کے آپریشنل جوہری ہتھیاروں کی تعداد 400 سے تجاوز کر چکی ہے۔ رپورٹ کے مطابق پیپلز لبریشن آرمی (پی ایل اے) 2035 تک اپنے قومی دفاع اور مسلح افواج کی جدید کاری کو مکمل کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔ اس میں کہا گیا ہے اگر چین اسی رفتار سے جوہری توسیع کرتا ہے، تو 2035 تک وہ تقریبا 1500 وار ہیڈز کا ذخیرہ کر سکتا ہے۔