Putin warns risk of nuclear war continues to grow

جنیوا:(اے یو ایس ) روسی صدر ولادیمیر پوتین نے امریکی صدر جوبائیڈن کے بیان کے بعد یوکرین کے معاملے پر مذاکرات کا عندیہ دیتے ہوئے زور دیا ہے کہ مغربی ممالک کو روس کے مطالبات تسلیم کرنے ہوں گے۔غیر ملکی خبر رساں ادارے ’رائٹرز‘ کے مطابق امریکی صدر جوبائیڈن کی جانب سے کہا گیا تھا کہ اگر ولادیمیر پوتین جنگ ختم کرنے کا راستہ تلاش کر رہے ہیں تو وہ بات کرنے کے لیے تیار ہیں، جس کے بعد روسی صدر کا یہ بیان سامنے آیا ہے۔

وائٹ ہاؤس میں فرانس کے صدر ایمانوئیل میکرون کے ساتھ بات چیت کے بعد امریکی صدر جوبائیڈن نے کہا تھا کہ اگر ولادیمیر پوتین جنگ ختم کرنے کا راستہ تلاش کرنے کے فیصلے میں دلچسپی رکھتے ہیں تو وہ ان سے بات کرنے کے لیے تیار ہیں۔جوبائیڈن نے ولادیمیر پوتین سے 24 فروری سے، جب سے کہ روس نے یوکرین پر جنگ مسلط کی تھی، براہ راست بات نہیں کی ہے۔ مارچ میں امریکی صدر نے پوتین کو قصاب قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ وہ اقتدار میں نہیں رہ سکتا۔رپورٹ کے مطابق 9 مہینے کی جنگ کے بعد سردیوں کی آمد کے ساتھ مغربی ممالک یوکرین کے لیے امداد بڑھا رہے ہیں جہاں روسی میزائل اور ڈرون حملوں نے توانائی کا انفرااسٹرکچر تباہ کر دیا ہے، جس کے سبب لاکھوں افراد کو بجلی اور پانی دستیاب نہیں ہے۔

سفارت کاروں نے بتایا کہ ماسکو کو جنگ کے لیے سرمایے میں کمی کے لیے یورپی یونین نے روسی تیل کے لیے 60 ڈالر فی بیرل کے کیپ پر رضامندی ظاہر کی ہے تاہم اس قدم کے لیے تمام یورپی حکومتوں کی تحریری منظور درکار ہوگی۔کریملین کے ترجمان دمیتری پیسکوف نے رپورٹرز کو بتایا کہ روس کے صدر ہمیشہ مذاکرات کے لیے تیار ہیں۔دمیتری پیسکوف نے کہا کہ امریکا کی جانب سے یوکرین کے الحاق شدہ علاقے تسلیم کرنے سے انکار جنگ کے خاتمے کے طریقوں کی تلاش میں رکاوٹ ہے۔