Russia rejects Biden's conditions for Ukraine talks

ماسکو:(اے یو ایس ) ماسکو نے روسی صدر ولادیمیر پوتین کے ساتھ یوکرین پر مذاکرات کے لیے امریکی صدر جو بائیڈن کی شرائط مسترد کر دی ہیں۔کریملن کے ترجمان دمتری پیسکوف نے کہا کہ اگر واشنگٹن کی شرط یہ ہے کہ روس یوکرین سے نکل جائے تو ماسکو مذاکرات میں داخل ہونے کے لیے تیار نہیں ہے۔ انہوں نے جرمن چانسلر اولاف شولز کو بتایا کہ یوکرین کے توانائی کے بنیادی ڈھانچے پر روسی حملے ضروری اور ناگزیر ہیں۔

کریملن کے ترجمان نے کہا کہ صدر ولادیمیر پوتین یوکرین میں فوجی آپریشن جاری رکھیں گے لیکن ساتھ ہی وہ مذاکرات کے لیے بھی تیار ہیں۔پیسکوف کا یہ بیان ایک کانفرنس کال کے دوران سامنے آیا جس میں امریکی صدر جو بائیڈن کے روس کے یوکرین سے انخلا کی صورت میں پوتین کے ساتھ بات چیت کے امکان کے بارے میں ایک سوال کا جواب دے رہے تھے۔بلومبرگ نیوز ایجنسی نے پیسکوف کے حوالے سے کہا کہ خصوصی فوجی آپریشن (یوکرین میں) جاری ہے لیکن ساتھ ہی انہوں نے اس بات پر زور دیا بھی ضروری ہے کہ صدر پوتین مذاکرات کے لیے رابطے کھلےرکھیں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ یقیناً اپنے مفادات کے حصول کے لیے سفارتی ذرائع کا استعمال زیادہ بہتر ہے۔امریکی صدر بائیڈن نے کہا تھا کہ وہ اپنے روسی ہم منصب سے یوکرین میں جنگ کے بارے میں بات کریں گے اگر پوتین حملے کو ختم کرنے میں سنجیدہ ہیں۔انہوں نے پہلے کہا تھا کہ یوکرین کے رہ نما امن مذاکرات کب منعقد کرنے کا فیصلہ کر سکتے ہیں۔جمعرات کو بائیڈن نے اپنے فرانسیسی ہم منصب امانوئل میکرون کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں کہا تھاکہ اگر پوتین جنگ کے خاتمے کا کوئی راستہ تلاش کرنے میں دلچسپی رکھتے ہیں تو میں ان سے بات کرنے کے لیے تیار ہوں۔